تکبر کیوں جب مٹی میں ہی جانا ہے؟؟؟

0
1829

بقلم : محمد زبیر ندوی شیروری

ﻏﺮﻭﺭ ﺍﻧﺴﺎﻧﯽ ﮐﺮﺩﺍﺭ ﮐﻮ دیمک ﮐﯽ ﻃﺮﺡ ﮐﮭﺎ ﺟﺎﺗﺎ ﮨﮯ . ﮐِﺒﺮ ﻭ ﻏﺮﻭﺭ ﺑﺪﺗﺮﯾﻦ ﻋﯿﺐ ہے ﺟﻮ ﮨﺮ ﺑﮭﻼﺋﯽ ﮐﯽ ﺟﮍ ﮐﺎﭦ ﺩﯾﺘﺎ ﮨﮯ . ﮐﺒﺮ ﻭ ﻓﺨﺮ ، ﻏﺮﻭﺭ و تکبر ، اور ﺧﻮﺩ ﭘﺴﻨﺪﯼ و ﺗﻌﻠّﯽ ﺍﯾﮏ ایسا ﺷﯿﻄﺎﻧﯽ ﺟﺬﺑﮧ ﮨﮯ ﺟﻮ ﺷﯿﻄﺎﻧﯽ ﮐﺎﻣﻮﮞ کے لئے ﮨﯽ ﻣﻮﺯﻭﮞ ﮨﻮﺳﮑﺘﺎ ﮨﮯ ۔ ﺧﯿﺮ ﮐﺎ ﮐﻮﺋﯽ ﮐﺎﻡ ﺍﺱ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﯿﺎ ﺟﺎﺳﮑﺘﺎ ۔ ﺍﺱ ﻟﺌﮯ ﮐﮧ ﺑﮍﺍﺋﯽ ﺻﺮﻑ ﺍﻟﻠﮧ ﺗﻌﺎﻟﯽٰ کے لئے ﮨﮯ ۔ ہندؤﻭﮞ ﻣﯿﮟ شرک ﮐﺎ عقیدہ ﺍﯾﮏ ﺟﮭﻮﭦ ﮐﮯ ﺳﻮﺍ ﮐﭽﮫ ﻧﮩﯿﮟ ۔ ﺟﻮ ﺷﺨﺺ ﯾﺎ ﮔﺮﻭﮦ ﺍﺱ ﺟﮭﻮﭨﮯ ﭘﻨﺪﺍﺭ ﻣﯿﮟ ﻣﺒﺘﻼ ﮨﻮ ﻭﮦ ﺍﻟﻠﮧ ﺗﻌﺎﻟﯽٰ ﮐﯽ ﮨﺮ ﺗﺎﺋﯿﺪ ﺳﮯ ﻣﺤﺮﻭﻡ ﮨﻮ ﺟﺎﺗﺎ ﮨﮯ ﮐﯿﻮﻧﮑﮧ ﺍﻟﻠﮧ ﮐﻮ ﺳﺐ ﺳﮯ ﺑﮍﮪ ﮐﺮ ﯾﮩﯽ ﭼﯿﺰ ﺍﭘﻨﯽ ﻣﺨﻠﻮﻕ ﻣﯿﮟ ﻧﺎﭘﺴﻨﺪ ﮨﮯ ۔ ﺍﺱ ﮐﺎ ﻧﺘﯿﺠﮧ ﯾﮧ ﮨﻮﺗﺎ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺍﺱ ﻣﺮﺽ ﮐﮯ ﻣﺮﯾﺾ ﮐﻮ ﮐﺒﮭﯽ ﺭﺍﮦِ ﺭﺍﺳﺖ ﮐﯽ ﻃﺮﻑ ﮨﺪﺍﯾﺖ ﻧﮩﯿﮟ ﻣﻠﺘﯽ ۔ ایک طرف ﻭﮦ ﭘﮯ ﺩﺭﭘﮯ ﺟﮩﺎﻟﺘﻮﮞ ﺍﻭﺭ ﺣﻤﺎﻗﺘﻮﮞ ﮐﺎ ﺍﺭﺗﮑﺎﺏ ﮐﺮﺗﺎ ﮨﮯ ۔ ﯾﮩﺎﮞ ﺗﮏ ﮐﮧ وہ دونوں جہانوں میں ناکام ہو جاتا ﮨﮯ ۔ نتیجتاً وہ ﺧﻠﻖ ﺧﺪﺍ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﺑﺮﺗﺎﻭٔ ﻣﯿﮟ ﺗﮑﺒﺮ ﮐﺎ ﺟﺘﻨﺎ ﺍﻇﮩﺎﺭ کرتا ﺟﺎﺗﺎ ﮨﮯ ﺍﺗﻨﯽ ﮨﯽ ﺍﺱ ﮐﮯ ﺧﻼﻑ ﻧﻔﺮﺕ ﭘﯿﺪﺍ ﮨﻮﺗﯽ ﭼﻠﯽ ﺟﺎﺗﯽ ﮨﮯ ، ﺣﺘﯽٰ ﮐﮧ ﻣﺒﻐﻮﺽِ ﺧﻼﺋﻖ ﮨﻮ ﮐﺮ ﻭﮦ ﺍﺱ ﻗﺎﺑﻞ ﮨﯽ ﻧﮩﯿﮟ ﺭﮨﺘﺎ ﮐﮧ ﺍﺱ ﮐﺎ ﮐﻮﺋﯽ ﺍﺧﻼﻗﯽ ﺍﺛﺮ ﻟﻮﮔﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﻗﺎﺋﻢ ﮨﻮﺳﮑﮯ ۔ ﺧﯿﺮ کے لئے ﮐﺎﻡ ﮐﺮﻧﮯ ﻭﺍﻟﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﯾﮧ ﺑﯿﻤﺎﺭﯼ ﮐﺌﯽ ﺭﺍﮨﻮﮞ ﺳﮯ ﺍٓﺗﯽ ﮨﮯ ۔ ﮐﻢ ﻇﺮﻑ ﻟﻮﮔﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﯾﮧ ﺍﺱ ﺭﺍﮦ ﺳﮯ ﺍٓﺗﯽ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺟﺐ ﺍﻥ ﮐﯽ ﺩﯾﻨﯽ ﻭ ﺍﺧﻼﻗﯽ ﺣﺎﻟﺖ ﮔﺮﺩ ﻭ ﭘﯿﺶ ﮐﮯ ﻣﻌﺎﺷﺮہ ﮐﯽ ﺑﮧ ﻧﺴﺒﺖ ﮐﺴﯽ ﺣﺪ ﺗﮏ ﺑﮩﺘﺮ ﮨﻮ ﺟﺎﺗﯽ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﮐﭽﮫ ﻗﺎﺑﻞ ﻗﺪﺭ ﺧﺪﻣﺎﺕ ﺑﮭﯽ ﺑﺠﺎﻻﺗﮯ ﮨﯿﮟ ﺟﻦ ﮐﺎ ﺍﻋﺘﺮﺍﻑ ﺩﻭﺳﺮﻭﮞ ﮐﯽ ﺯﺑﺎﻧﻮﮞ ﺳﮯ ﮨﻮﻧﮯ ﻟﮕﺘﺎ ﮨﮯ ﺗﻮ ﺷﯿﻄﺎﻥ ﺍﻥ ﮐﮯ ﺩﻟﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﯾﮧ ﻭﺳﻮﺳﮧ ﮈﺍﻟﻨﺎ ﺷﺮﻭﻉ ﮐﺮ ﺩﯾﺘﺎ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺍﺏ ﻭﺍﻗﻌﯽ ﺑﮍﯼ ﭼﯿﺰ ﮨﻮﮔﺌﮯ ﮨﻮ ﺍﻭﺭ ﺷﯿﻄﺎﻥ ﮨﯽ ﮐﯽ ﺍﮐﺴﺎﮨﭧ ﺳﮯ ﻭﮦ ﺍﭘﻨﯽ ﺑﮍﺍﺋﯽ ﺍﭘﻨﯽ ﺯﺑﺎﻥ ﺍﻭﺭ ﺍﭘﻨﮯ ﻃﺮﺯِ ﻋﻤﻞ ﺳﮯ ﺟﺘﺎﻧﮯ ﭘﺮ ﺍﺗﺮ ﺍٓﺗﮯ ﮨﯿﮟ ۔ ﺍﺱ ﻃﺮﺡ ﻭﮦ ﮐﺎﻡ ﺟﺲ ﮐﺎ ﺍٓﻏﺎﺯ ﻧﯿﮑﯽ ﮐﮯ ﺟﺬبہ ﺳﮯ ﮨﻮﺍ ﺗﮭﺎ ، ﺭﻓﺘﮧ ﺭﻓﺘﮧ وہ ﺍﯾﮏ ﻧﮩﺎﯾﺖ ﻏﻠﻂ جذبہ بن جاتا ﮨﮯ . ﺩﻭﺳﺮﺍ ﺭﺍﺳﺘﮧ ﺍﺱ ﮐﮯ ﺍٓﻧﮯ ﮐﺎ ﯾﮧ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺟﻮ ﻟﻮﮒ ﻧﯿﮏ ﻧﯿﺘﯽ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﺍﯾﮏ ﻃﺮﻑ ﺍﭘﻨﯽ ﺍﻭﺭ ﺩﻭﺳﺮﯼ ﻃﺮﻑ ﺧﻠﻖ ﺧﺪﺍ ﮐﯽ ﺍﺻﻼﺡ کے ﮐﻮﺷﺶ ﮐﺮﺗﮯ ﮨﯿﮟ ﺍﻥ ﮐﮯ ﺍﻧﺪﺭ ﻻ ﻣﺤﺎﻟﮧ ﮐﭽﮫ ﺑﮭﻼﺋﯿﺎﮞ ﭘﯿﺪﺍ ﮨﻮﺗﯽ ﮨﯿﮟ ، ﮐﺴﯽ ﻧﮧ ﮐﺴﯽ ﺣﺪ ﺗﮏ ﻭﮦ ﺍﭘﻨﮯ ﻣﻌﺎﺷﺮہ ﮐﯽ ﻋﺎﻡ ﺣﺎﻟﺖ ﺳﮯ ﻣﻤﺘﺎﺯ ﮨﻮﺗﮯ ﮨﯿﮟ . ﮐﭽﮫ ﻧﮧ ﮐﭽﮫ ﺍﻥ ﮐﯽ ﺧﺪﻣﺎﺕ ﻗﺎﺑﻞ ﻗﺪﺭ ﺛﺎﺑﺖ ﮨﻮﺗﯽ ﮨﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﯾﮧ ﺍﯾﺴﮯ ﻭﺍﻗﻌﯽ ﺍﻣﻮﺭ ﮨﯿﮟ ﺟﻮ ﺑﮩﺮ ﺣﺎﻝ ﻣﺤﺴﻮﺱ ﮨﻮﺋﮯ ﺑﻐﯿﺮ ﻧﮩﯿﮟ ﺭﮨﺘﮯ . بھلائی ﭘﺎﮐﺮ ﻏﺮﻭﺭِ ﻧﻔﺲ ﻣﯿﮟ ﻣﺒﺘﻼ ﮨﻮﻧﺎ ﺗﻮ ﺩﺭ ﺍﺻﻞ ﺍﺳﮯ ﺑﺮﺍﺋﯽ ﺳﮯ ﺑﺪﻝ ﻟﯿﻨﺎ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﯾﮧ ﺗﺮﻗﯽ ﮐﺎ ﻧﮩﯿﮟ ﺑﻠﮑﮧ ﺗﻨﺰﻝ ﮐﺎ ﺭﺍﺳﺘﮧ ﮨﮯ ۔ ﺍﺣﺴﺎﺱِ ﺑﻨﺪﮔﯽ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﺩﻭﺳﺮﯼ ﭼﯿﺰ ﺟﻮ ﺍﻧﺴﺎﻥ ﮐﻮ ﺗﮑﺒﺮ ﮐﮯ ﺭﺟﺤﺎﻧﺎﺕ ﺳﮯ ﺑﭽﺎﺳﮑﺘﯽ ﮨﮯ ﻭﮦ ﻣﺤﺎﺳﺒﮧٔ ﻧﻔﺲ ﮨﮯ ، ﺟﻮ ﺷﺨﺺ ﺍﭘﻨﺎ ﭨﮭﯿﮏ ﭨﮭﯿﮏ محاسبہ کرے ﺍﻭﺭ ﺍﭘﻨﯽ ﺧﻮﺑﯿﻮﮞ ﮐﻮ ﻣﺤﺴﻮﺱ ﮐﺮﻧﮯ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﺳﺎﺗﮫ ﯾﮧ ﺑﮭﯽ ﺩﯾﮑﮭﮯ ﮐﮧ ﻭﮦ ﮐﻦ ﮐﻤﺰﻭﺭﯾﻮﮞ ﺍﻭﺭ ﺧﺎﻣﯿﻮﮞ ﺍﻭﺭ ﮐﻮﺗﺎﮨﯿﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﻣﺒﺘﻼ ﮨﮯ ، ﻭﮦ ﮐﺒﮭﯽ ﺧﻮﺩ ﭘﺴﻨﺪﯼ ﻭ ﺧﻮﺩ ﭘﺮﺳﺘﯽ ﮐﮯ ﻣﺮﺽ ﮐﺎ ﺷﮑﺎﺭ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮﺳﮑﺘﺎ ۔ ﺍﭘﻨﮯ ﮔﻨﺎﮨﻮﮞ ﺍﻭﺭ ﻗﺼﻮﺭﻭﮞ ﭘﺮ ﮐﺴﯽ ﮐﯽ ﻧﮕﺎﮦ ﮨﻮ ﺗﻮ ﺍﺳﺘﻐﻔﺎﺭ ﺳﮯ ﺍﺱ ﮐﻮ ﺍﺗﻨﯽ ﻓﺮﺻﺖ ﮨﯽ ﻧﮧ ﻣﻠﮯ ﮐﮧ ﺍﺳﺘﮑﺒﺎﺭ ﮐﯽ ﮨﻮﺍ ﺍﺱ ﮐﮯ ﺳﺮ ﻣﯿﮟ ﺳﻤﺎ ﺳﮑﮯ . تو آئیے ذرا قرآن کی زبانی متکبر اقوام کے حالات و انجام کو دیکھیں .

اگر ہم قرآن کا مطالعہ کریں اور سمجھ کر پڑھیں تو ہمیں بہت ساری ایسی نصیحتیں حاصل ہو سکتی ہیں جو ہماری زندگی کو سنوار سکتی ہیں . اللہ تعالیٰ نے بے متعدد مقامات پر متکبر اقوام اور ان کے حالات کا نقشہ اپنے الفاظ میں کھینچ کر یہ بتایا ہے کہ تکبر کس قدر بڑا گناہ ہے. جس کو ہم ﻗﺮﺁن کے مطالعہ ﺳﮯ سمجھ سکتے ہیں . ﺍﻭﺭ ﻋﻘﻼً ﺑﮭﯽ ﯾﮧ ﺛﺎﺑﺖ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺩﻧﯿﺎ ﻣﯿﮟ ﺳﺐ ﺳﮯ ﺑﮍﺍ ﮔﻨﺎﮦ ﺗﻤﺮﺩ ﻭ ﺳﺮﮐﺸﯽ ﮨﮯ ۔ ﯾﮧ ﻣﻌﺼﯿﺖ ﺍﻡ ﺍﻟﻤﻌﺎﺻﯽ ﮨﮯ ۔ ﺍﺱ ﮐﮯ ﻧﺘﺎﺋﺞ ﺍﻭﺭ ﺛﻤﺮﺍﺕ ﺍﺱ ﻗﺪﺭ ﻣﮩﻠﮏ ﮨﻮﺗﮯ ﮨﯿﮟ ﮐﮧ ﺍﺱ ﮐﮯ ﺳﺎﻣﻨﮯ بڑے بڑے گناہوں ﮐﯽ ﺑﮭﯽ ﮐﻮﺋﯽ ﺣﻘﯿﻘﺖ ﻧﮩﯿﮟ ہوتی ۔ ﺷﺮﮎ کا ﮔﻨﺎﮦِ ﻋﻈﯿﻢ ﮨﻮﻧﮯ ﻣﯿﮟ ﮐﺴﮯ ﺷﺒﮧ ﮨﻮ ﺳﮑﺘﺎ ﮨﮯ ۔ ﻟﯿﮑﻦ ﺷﺮﮎ ﮐﻮﺋﯽ ﺍﯾﺴﺎ مرض بھی نہیں جو لا علاج ہو . اگر کسی ﻣﺸﺮﮎ ﮐﮯ ﺳﺎﻣﻨﮯ ﺷﺮﮎ ﮐﯽ ﺑﺮﺍﺋﯿﺎﮞ ﺑﯿﺎﻥ ﮐﯽ ﺟﺎﺋﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﺧﺪﺍ ﮐﯽ ﻭﺣﺪﺍﻧﯿﺖ ﮐﮯ ﺩﻻﺋﻞ ﺍﺱ ﮐﻮ ﺳﻤﺠﮭﺎﺋﮯ ﺟﺎﺋﯿﮟ ﺗﻮ ﻣﻤﮑﻦ ﮨﮯ کہ ﻭﮦ ﺑﺎﻃﻞ ﭘﺮﺳﺘﯽ ﺳﮯ ﺗﺎﺋﺐ ﮨﻮ ﮐﺮ ﺳﭽﺎ ﺣﻖ ﭘﺮﺳﺖ ﺑﻦ ﺟﺎﺋﮯ ۔ ﻟﯿﮑﻦ ﺍﯾﮏ ﺍﯾﺴﮯ ﺷﺨﺺ ﺳﮯ ﺟﻮ ﮐﺒﺮ ﻭ ﻏﺮﻭﺭ ﮐﮯ ﻧﺸﮧ ﻣﯿﮟ ﺳﺮﺷﺎﺭ ﮨﻮ تو ایسے فرد بشر سے یہ ﺗﻮﻗﻊ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﯽ ﺟﺎ ﺳﮑﺘﯽ ﮐﮧ ﻭﮦ ﮐﺒﮭﯽ ﺭﺍﮦ ﺭﺍﺳﺖ ﭘﺮ ﺁﺋﮯ گا ﮐﯿﻮﻧﮑﮧ ﻭﮦ ﺍﭘﻨﮯ ﺗﮑﺒﺮ ﮐﯽ ﺑﻨﺎﺀ ﭘﺮ ﮐﻠﻤﮧِ ﺣﻖ ﺳﻨﻨﮯ ﺗﮏ ﮐﺎ ﺭﻭﺍﺩﺍﺭ نہیں ہے ۔ ﭘﮭﺮ ﺍﺱ ﮐﯽ ﺍﺻﻼﺡ ﮨﻮ ﺗﻮ ﮐﯿﻮﻧﮑﺮ ﮨﻮ ؟ ﯾﮩﯽ ﻭﺟﮧ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺍﻧﺒﯿﺎﺀِ ﮐﺮﺍﻡ ﮐﯽ ﺩﻋﻮﺕ ﺳﺐ ﺳﮯ ﭘﮩﻠﮯ ﻭﮦ ﻟﻮﮒ ﻗﺒﻮﻝ ﮐﺮﺗﮯ ﮨﯿﮟ ﺟﻦ ﮐﮯ ﺩﻝ ﻏﺮﻭﺭ ﺳﮯ ﭘﺎﮎ ﮨﻮﺗﮯ ﮨﯿﮟ ﺟﺐ ﮐﺴﯽ ﺍﻧﺴﺎﻥ ﭘﺮ ﻏﺮﻭﺭ ﻭ ﺍﺳﺘﮑﺒﺎﺭ ﮐﺎ ﺑﮭﻮﺕ ﺳﻮﺍﺭ ﮨﻮ ﺟﺎﺗﺎ ﮨﮯ ﺗﻮ ﭘﮭﺮ ﺍﺱ ﮐﮯ ﺳﺎﻣﻨﮯ ﺳﺎﺭﯼ ﺣﺠﺘﯿﮟ ﺑﯿﮑﺎﺭ ﮨﻮ ﺟﺎﺗﯽ ﮨﯿﮟ ، ﺗﺒﻠﯿﻎ ﻭ ﺍﺭﺷﺎﺩ ﮐﮯ ﺗﻤﺎﻡ ﻃﺮﯾﻘﮯ ﺑﮯ ﺳﻮﺩ ﮨﻮ ﺟﺎﺗﮯ ﮨﯿﮟ ﺟﻦ ﮐﻮ ﻗﺒﻮﻝ ﮐﺮﻧﺎ ﺗﻮ ﺩﺭﮐﻨﺎر ﺍﺱ ﮐﻮ ﺳﻨﻨﮯ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﺑﮭﯽ ﺗﯿﺎﺭ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮﺗﺎ جس کی عکاسی خود قرآن کریم یوں کرتا ہے . ” ﻭَ ﺇِﺫَﺍ ﺗُﺘۡﻠَﻰٰ ﻋَﻠَﻴۡﻪِ ﺀَﺍﻳَٰﺘُﻨَﺎ ﻭَﻟَّﻰٰ ﻣُﺴۡﺘَﻜۡﺒِﺮٗﺍﻛَﺄَﻥ ﻟَّﻢۡ ﻳَﺴۡﻤَﻌۡﻬَﺎ ﻛَﺄَﻥَّ ﻓِﻲٓ ﺃُﺫْﻧَﻴۡﻪِ ﻭَﻗۡﺮَﺍ ” ﺍﻭﺭ ﺟﺐ ﺍﻥ ﻣﯿﮟ ﮐﺴﯽ ﮐﻮ ﮨﻤﺎﺭﯼ ﺁﯾﺘﯿﮟ ﭘﮍﮪ ﮐﺮ ﺳﻨﺎﺋﯽ ﺟﺎﺗﯽ ﮨﯿﮟ ﺗﻮ ﺍﮐﮍﺗﺎ ﮨﻮﺍ ﻣﻨﮧ ﭘﮭﯿﺮ ﮐﺮ ﭼﻞ ﺩﯾﺘﺎ ﮨﮯ ﺟﯿﺴﮯ ﺍﺱ ﻧﮯ ﮨﻤﺎﺭﯼ ﺁﯾﺘﻮﮞ ﮐﻮ ﺳﻨﺎ ﮨﯽ ﻧﮩﯿﮟ ، ﮔﻮﯾﺎ ﺍﺱ ﮐﮯ ﺩﻭﻧﻮﮞ ﮐﺎﻧﻮﮞ ﻣﯿﮟ ڈاٹ لگے ہوئے ﮨﯿﮟ ۔ ( ﻟﻘﻤﺎﻥ :7 )

اسی طرح دوسری جگہ ارشاد ہے کہ ” ﻳَﺴۡﻤَﻊُ ﺀَﺍﻳَٰﺖِ ﭐﻟﻠَّﻪِ ﺗُﺘۡﻠَﻰٰ ﻋَﻠَﻴۡﻪِ ﺛُﻢَّ ﻳُﺼِﺮُّ ﻣُﺴۡﺘَﻜۡﺒِﺮًا ﻛَﺄَﻥ ﻟَّﻢۡ ﻳَﺴۡﻤَﻌۡﻬَﺎ ” ﻭﮦ ﺍﻟﻠﮧ ﮐﯽ ﺁﯾﺘﻮﮞ ﮐﻮ ﭘﮍﮬﺘﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﺳﻨﺘﺎ ﮨﮯ ﭘﮭﺮ ﺑﮭﯽ ﻣﺎﺭﮮ ﻏﺮﻭﺭ ﮐﮯ ﺍﮌﺍ ﺭﮨﺘﺎ ﮨﮯ ﮔﻮﯾﺎ ﺍﺱ ﻧﮯ ﺍﻥ ﺁﯾﺘﻮﮞ ﮐﻮ ﺳﻨﺎ ﮨﯽ ﻧﮩﯿﮟ ۔ ( ﺟﺎﺛﯿﮧ : 8 ) . ” ﻭَ ﻣِﻦَ ﭐﻟﻨَّﺎﺱِ ﻣَﻦ ﻳَﺸۡﺘَﺮِﻱ ﻟَﻬۡﻮَ ﭐﻟۡﺤَﺪِﻳﺚِﻟِﻴُﻀِﻞَّ ﻋَﻦ ﺳَﺒِﻴﻞِ ﭐﻟﻠَّﻪِ ﺑِﻐَﻴۡﺮِ ﻋِﻠۡﻢٖ ﻭَ ﻳَﺘَّﺨِﺬَﻫَﺎ ﻫُﺰُﻭًﺍ ” ﺍﻭﺭ ﻟﻮﮔﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺍﯾﺴﮯ ﺑﮭﯽ ﮨﯿﮟ ﺟﻮ ﻭﺍﮨﯿﺎﺕ ﻗﺼﮯ ﮐﮩﺎﻧﯿﺎﮞ ﻣﻮﻝ ﻟﮯ ﻟﯿﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﺗﺎﮐﮧ ﻟﻮﮔﻮﮞ ﮐﻮ ﺑﮯ ﺳﻤﺠﮭﮯ ﺑﻮﺟﮭﮯ ﺭﺍﮦِ ﺧﺪﺍ ﺳﮯ ﺑﮭﭩﮑﺎﺋﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﺁﯾﺎﺕ ﺍﻟٰﮩﯽ ﮐﯽ ﮨﻨﺴﯽ ﺍﮌﺍﺋﯿﮟ ۔ ” ‏( ﻟﻘﻤﺎﻥ : 6 ‏) . ” ﻓَﻠَﻤَّﺎ ﺟَﺎٓﺀَﻫُﻢۡ ﻧَﺬِﻳﺮٌ ﻣَّﺎ ﺯَﺍﺩَﻫُﻢۡ ﺇِﻟَّﺎ ﻧُﻔُﻮﺭًﺍ ٤٢ ﭐﺳۡﺘِﻜۡﺒَﺎﺭٗﺍ ﻓِﻲ ﭐﻟۡﺄَﺭۡﺽِ ” ﭘﮭﺮ ﺟﺐ ﮈﺭﺍﻧﮯ ﻭﺍﻻ ﺍﻥ ﮐﮯ ﭘﺎﺱ ﺁﭘﮩﻨﭽﺎ ﺗﻮ ﺍﺱ ﮐﮯ ﺁﻧﮯ ﺳﮯ ﺍﻥ ﮐﯽ ﻧﻔﺮﺕ ﮐﻮ ﺗﺮﻗﯽ ﮨﻮ ﮔﺌﯽ . دنیا میں اپنے آپ کو بڑا سمجھنے لگے . ( ﻓﺎﻃﺮ : 42 . 43 ‏)

ﻏﺮﺽ ﺣﻖ ﺳﮯ ﺍﻋﺮﺍﺽ ، ﺍﻋﺮﺍﺽ ﭘﺮ ﺍﺻﺮﺍﺭ ، ﺍﻓﺘﺮﺍ ﭘﺮﺩﺍﺯﯼ ، ﺁﯾﺎﺕ ﮐﯽ ﺗﮑﺬﯾﺐ ﺍﻧﺒﯿﺎﺀ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﺍﺳﺘﮩﺰﺍﺀ ﺍﻭﺭ ﺍﻥ ﮐﯽ ﺗﻮ ﮨﯿﻦ ﯾﮧ ﺳﺎﺭﯼ ﺑﺎﺗﯿﮟ ﺍﺳﺘﮑﺒﺎﺭ ﮐﮯ ﻧﺘﺎﺋﺞ ﻭ ﺛﻤﺮﺍﺕ ﮨﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﯾﮧ ﻭﮦ ﺟﺮﺍﺋﻢ ﮨﯿﮟ ﺟﻮ ﺍﺑﻠﯿﺴﺎﻧﮧ ﺍﻭﺭ ﻣﺠﺮﻣﺎﻧﮧ ﺣﺮﮐﺘﻮﮞ ﮐﮯ ﺁﺧﺮﯼ ﻣﻈﺎﮨﺮ ﮨﯿﮟ . اﺳﯽ ﺑﻨﺎﺀ ﭘﺮ ﺧﺪﺍ ﻧﮯ ﺍﻥ ﺗﻤﺎﻡ ﻟﻮﮔﻮﮞ ﮐﻮ ﺟﻮ ﺍﻥ ﺍﻋﻤﺎﻝ ﮐﺎ ﺍﺭﺗﮑﺎﺏ ﮐﺮﺗﮯ ﮨﯿﮟ ﺳﺐ ﺳﮯ ﺑﮍﺍ ﻇﺎﻟﻢ ﺍﻭﺭ ﻣﺠﺮﻡ ﻗﺮﺍﺭ ﺩﯾﺎ ﮨﮯ ﭼﻨﺎﻧﭽﮧ ﻓﺮﻣﺎﯾﺎ : ” ﻭَ ﻣَﻦۡ ﺃَﻇۡﻠَﻢُ ﻣِﻤَّﻦ ﺫُﻛِّﺮَ بِآﻳَٰﺖِ ﺭَﺑِّﻪِ.ﻓَﺄَﻋۡﺮَﺽَ ﻋَﻨۡﻬَﺎ ﻭَ ﻧَﺴِﻲَ ﻣَﺎ ﻗَﺪَّﻣَﺖۡ ﻳَﺪَﺍﻩُۚ ” ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﺷﺨﺺ ﺳﮯ ﺑﮍﮪ ﮐﺮ ﻇﺎﻟﻢ ﮐﻮﻥ ﮨﮯ ﺟﺲ ﮐﻮ ﺭﺏ ﮐﯽ ﺁﯾﺘﻮﮞ ﺳﮯ ﺗﺬﮐﯿﺮ ﮐﯽ ﺟﺎﺗﯽ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﻭﮦ ﺍﻥ ﺳﮯ ﺍﻋﺮﺍﺽ ﮐﺮﺗﺎ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﺑﮭﻮﻝ ﺟﺎﺗﺎ ﮐﮧ ﺍﺱ ﮐﮯ ﮨﺎﺗﮭﻮﮞ ﻧﮯ ﮐﯿﺎ ﭘﯿﺶ ﮐﯿﺎ ( ﮐﮩﻒ : 57 )

ﻏﻮﺭ ﮐﯿﺠﺌﮯ کہ ﻧﻮﺡ ﻋﻠﯿﮧ ﺍﻟﺴﻼﻡ ﺍﭘﻨﯽ ﻗﻮﻡ ﮐﯽ ﺳﺮﮐﺸﯽ ﺳﮯ ﻋﺎﺟﺰ ﺁ ﮐﺮ ﺍﺱ ﮐﯽ ﮨﻼﮐﺖ ﮐﯽ ﺩﻋﺎ ﮐﺮتے ہیں ﺗﻮ ﺍﺱ ﮐﺎ ﺳﺒﺐ ﮐﯿﺎ ﺑﯿﺎﻥ ﮐﺮﺗﮯ ﮨﯿﮟ ؟ ﻓﺮﻣﺎﺗﮯ ﮨﯿﮟ : ” ﻭَ ﺇِﻧِّﻲ ﻛُﻠَّﻤَﺎ ﺩَﻋَﻮۡﺗُﻬُﻢۡ ﻟِﺘَﻐۡﻔِﺮَ ﻟَﻬُﻢۡ ﺟَﻌَﻠُﻮٓﺍْ ﺃَﺻَٰﺒِﻌَﻬُﻢۡ ﻓِﻲٓ ﺀَﺍﺫَﺍﻧِﻬِﻢۡ ﻭَﭐﺳۡﺘَﻐۡﺸَﻮۡﺍْ ﺛِﻴَﺎﺑَﻬُﻢۡ ﻭَ ﺃَﺻَﺮُّﻭﺍْ ﻭَ ﭐﺳۡﺘَﻜۡﺒَﺮُﻭﺍْ ﭐﺳۡﺘِﻜۡﺒَﺎﺭٗﺍ ٧ ” ﺍﻭﺭ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﺟﺐ ﮐﺒﮭﯽ ﺍﻥ ﮐﻮ ﺑﻼﯾﺎ ﺗﺎﮐﮧ ﺗُﻮ ﺍنھیں ﺑﺨﺶ ﺩﮮ ﺗﻮ ﺍنھوں ﻧﮯ ﺍﭘﻨﯽ ﺍﻧﮕﻠﯿﺎﮞ ﮐﺎﻧﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﮈﺍﻝ ﻟﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﺍﭘﻨﮯ ﺍﻭﭘﺮ ﮐﭙﮍﮮ ﻟﭙﯿﭧ لئے ﺍﻭﺭ ﺿﺪ کیا ﺍﻭﺭ ﻏﺮﻭﺭ ﮐﯿﺎ ﺑﮍﺍ ﻏﺮﻭﺭ ۔ ” ‏( ﻧﻮﺡ : 7 ‏) . ﺍﺧﯿﺮ ﻣﯿﮟ ﻓﺮﻣﺎﺗﮯ ﮨﯿﮟ : ” ﺇِﻧَّﻚَ ﺇِﻥ ﺗَﺬَﺭۡﻫُﻢۡ ﻳُﻀِﻠُّﻮﺍْ ﻋِﺒَﺎﺩَﻙَ ﻭَ ﻟَﺎ ﻳَﻠِﺪُﻭٓﺍْ ﺇِﻟَّﺎ ﻓَﺎﺟِﺮٗﺍ ﻛَﻔَّﺎﺭٗﺍ ٢٧ ” ﺍﮮ ﺧﺪﺍ ﺍﮔﺮ ﺗﻮ ﺍﻥ ﮐﻮ ﭼﮭﻮﮌ ﺩﮮ ﮔﺎ ‏( ﯾﮧ ﺗﺒﺎﮦ ﻧﮧ ﮐﺮ ﺩﯾﮯ ﺟﺎﺋﯿﮟ ‏) ﺗﻮ ﺗﯿﺮﮮ ﺑﻨﺪﻭﮞ ﮐﻮ ﮔﻤﺮﺍﮦ ﮐﺮﯾﮟ ﮔﮯ ﺍﻭﺭ ﺍﻥ ﺳﮯ ﺟﻮ ﺑﮭﯽ ﭘﯿﺪﺍ ﮨﻮﮞ ﮔﮯ ﻭﮦ ﺑﺪ ﮐﺮﺩﺍﺭ ﺍﻭﺭ ﻧﺎ ﺷﮑﺮﮮ ﮨﻮﮞ ﮔﮯ‏ ( ﻧﻮﺡ : 27 ‏)

غرور و سرکشی اور ﺗﻤﺮﺩ ﮐﯽ ﻭﺍﺿﺢ ﻣﺜﺎﻝ ﺷﯿﻄﺎﻥ ﮨﮯ ﺟﺲ ﮐﺎ ﻗﺼﮧ ﻗﺮﺁﻥ ﮐﯽ ﻣﺘﻌﺪﺩ ﺳﻮﺭﺗﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﻣﺬﮐﻮﺭ ﮨﮯ ۔ ﺍﺱ ﻧﮯ تکبر ﮨﯽ ﮐﯽ ﺑﻨﺎﺀ ﭘﺮ ﻓﺮﻣﺎﻥِ خداوندی ﮐﯽ ﺍﻃﺎﻋﺖ ﺳﮯ ﺍﻧﮑﺎﺭ ﮐﺮ ﺩﯾﺎ ﺍﻭﺭ ﺗﻤﺮﺩ و سرکشی ﮨﯽ ﮐﯽ ﺑﻨﺎﺀ ﭘﺮ ﺍﺳﮯ ﺧﺪﺍ ﮐﮯ ﺳﺎﻣﻨﮯ ﺍﺱ ﺍﻋﻼﻥ ﮐﯽ ﺟﺮﺍﺕ ﮨﻮﺋﯽ ﮐﮧ ” قَالَ مَامَنَعَكَ اَنْ لاَتَسْجُدُ اِذَا اَمَرْتُكَ.قَالَ اَنَاخَیْرٌمِنْهُ. خَلَقْتَنِیْ مِنْ نَارٍ وَخَلَقْتَهُ مِنْ طِیْنٍ ” اللہ نے فرمایا کہ تو سجدہ کیوں نہیں کرتا تجھ کو اس سے کونسا امر مانع ہے جبکہ میں تجھ کو حکم دے رہا ہوں . کہنے لگا کہ میں اس سے بہتر ہوں . آپ نے مجھے آگ سے پیدا کیا ہے اور اسے خاک سے پیدا کیا ہے . ( الاعراف : 12 )

اسی کے باعث دنیا میں پھینک دیا گیا . جس پر اس نے کہا کہ ﻣﯿﮟ ﺗﯿﺮﮮ ﺑﻨﺪﻭﮞ ﮐﻮ ﮨﻤﯿﺸﮧ ﺗﯿﺮﮮ ﺭﺳﺘﮯ ﺳﮯ ﺑﮩﮑﺎﺗﺎ ﺭﮨﻮﮞ ﮔﺎ ” ﺍﻭﺭ ﺍﺳﮯ ﯾﮧ ﺗﻮ ﻓﯿﻖ ﻧﮧ ﮨﻮﺋﯽ ﮐﮧ ﺍﭘﻨﯽ ﻧﺎﻓﺮﻣﺎﻧﯽ ﭘﺮ ﭘﺸﯿﻤﺎﻥ ﮨﻮﺗﺎ ﺍﻭﺭ ﺗﻮﺑﮧ ﮐﺮﺗﺎ ﮐﮧ ﺗﻮﺑﮧ ﮐﺮﻧﮯ ﻭﺍﻟﻮﮞ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﺭﺣﻤﺖِ ﺑﺎﺭﯼ ﮐﺎ ﺩﺭﻭﺍﺯﮦ ﮨﻤﯿﺸﮧ ﮐﮭﻼ ﺭﮨﺘﺎ ﮨﮯ ۔ ﮐﯿﺎ ﺁﺩﻡ علیہ السلام ﺳﮯ ﺧﺪﺍ ﮐﮯ ﺣﮑﻢ ﮐﯽ ﻧﺎ ﻓﺮﻣﺎﻧﯽ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮﺋﯽ ﺗﮭﯽ ؟ ﻟﯿﮑﻦ ﺍﺱ ﮐﺎ ﺳﺒﺐ ﻏﺮﻭﺭ ﻧﮧ ﺗﮭﺎ ﺑﻠﮑﮧ ﻏﻔﻠﺖ ﺗﮭﯽ ﺟﻮ تقاضہِ ﺑﺸﺮﯾﺖ ﮨﮯ ۔ ﯾﮩﯽ ﻭﺟﮧ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺟﯿﺴﮯ ﮨﯽ ﺍنھیں ﺗﻨﺒﯿﮩﮧ ﮨﻮﺋﯽ ﻓﻮﺭﺍً ﺗﻮﺑﮧ ﮐﯽ ۔

ﺑﻨﯽ ﺍﺳﺮﺍﺋﯿﻞ کی سرکشی کا ذکر ﺟﺲ ﮐﺜﺮﺕ ﺍﻭﺭ ﺗﻔﺼﯿﻞ ﺳﮯ قرآن میں ﺁﯾﺎ ﮨﮯ ﻏﺎﻟﺒﺎً ﮐﺴﯽ ﻗﻮﻡ ﮐﺎ ﻧﮩﯿﮟ ﺁﯾﺎ ﺍﮔﺮ ﺑﻨﯽ ﺍﺳﺮﺍﺋﯿﻞ ﮐﯽ ﭘﻮﺭﯼ ﺗﺎﺭﯾﺦ ﺣﻀﺮﺕ ﻣﻮﺳﯽٰ ﺳﮯ ﻟﮯ ﮐﺮ نبی کریم ﷺ ﮐﮯ ﺯﻣﺎنہ ﺗﮏ ﺳﺎﻣﻨﮯ ﺭﮐﮭﯽ ﺟﺎﺋﮯ ﺗﻮ ﺍﻥ ﮐﮯ ﻋﺮﻭﺝ ﻭ ﺯﻭﺍﻝ ﮐﯽ ﺍﯾﮏ ﻣﮑﻤﻞ ﺗﺼﻮﯾﺮ ﻧﮕﺎﮨﻮﮞ ﮐﮯ ﺳﺎﻣﻨﮯ ﺁﺟﺎﺋﮯ ﮔﯽ ۔ ﺑﻨﯽ ﺍﺳﺮﺍﺋﯿﻞ ﮐﺎ ﺍﯾﮏ ﻭﮦ ﺯﻣﺎﻧﮧ ﮨﮯ ﺟﺐ ﺍﻥ ﭘﺮ ﺧﺪﺍ ﮐﯽ ﻧﻌﻤﺖ ﺍﻭﺭ ﺭﺣﻤﺖ ﮐﺎ ﺑﺎﺏ کھل جاتا ﮨﮯ ﻭﮦ ﻓﺮﻋﻮﻥ ﺟﯿﺴﮯ ﺳﺮﮐﺶ ﺑﺎﺩﺷﺎﮦ ﮐﮯ ﭘﻨﺠﮧِ ﺍﺳﺘﺒﺪﺍﺩ ﺳﮯ ﺣﻀﺮﺕ ﻣﻮﺳﯽٰ ﮐﮯ ﮨﺎﺗﮭﻮﮞ ﻧﺠﺎﺕ ﭘﺎﺗﮯ ﮨﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﺍﺳﺘﺨﻼﻑ ﻓﯽ ﺍﻻﺭﺽ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﻣﻨﺘﺨﺐ ﮨﻮﺗﮯ ﮨﯿﮟ ﺑﺎﺩﺷﺎﮨﺖ ﺍﻭﺭ ﺗﺨﺖ ﻭ ﺗﺎﺝ ﮐﮯ ﻣﺎﻟﮏ ﮨﻮ ﺗﮯ ﮨﯿﮟ ۔ ﺍﻥ ﮐﻮ ﺧﺪﺍﺋﮯ ﺑﺮﺗﺮ ﮐﯽ ﺟﺎﻧﺐ ﺳﮯ ﺍﯾﮏ ﻋﮩﺪ ﻧﺎﻣﮧ ﻣﻠﺘﺎ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺍﮔﺮ ﺗﻢ ﻟﻮﮒ ﻣﯿﺮﮮ ﺍﺣﮑﺎﻡ ﻭ ﻗﻮﺍﻧﯿﻦ ﮐﯽ ﺗﻌﻤﯿﻞ ﮐﺮﻭ ﮔﮯ ﺗﻮ ﺗﻢ ﺯﻣﯿﻦ ﮐﮯ ﻭﺍﺭﺙ ﺭﮨﻮ ﮔﮯ ﺍﻭﺭ ﻣﯿﺮﯼ ﺑﺮﮐﺘﻮﮞ ﺍﻭﺭ ﻧﻌﻤﺘﻮﮞ ﮐﮯ ﮨﻤﯿﺸﮧ ﻣﺴﺘﺤﻖ ﺭﮨﻮ ﮔﮯ ﺍﻭﺭ ﺍﮔﺮ ﺗﻢ ﻧﮯ ﻣﯿﺮﮮ ﻋﮩﺪ ﮐﻮ ﺗﻮﮌﺍ ﺗﻮ ﺗﻢ ﻣﯿﺮﮮ ﻏﻀﺐ ﻭ ﻋﺬﺍﺏ ﮐﮯ ﻣﺴﺘﺤﻖ ﮨﻮ ﺟﺎﺅ ﮔﮯ ﯾﮧ ﺧﺪﺍ ﮐﺎ ﺑﻨﯽ ﺍﺳﺮﺍﺋﯿﻞ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﻋﮩﺪ ﺗﮭﺎ ۔ ﯾﮧ ﻋﮩﺪ ﮨﺮ ﺍﺱ ﻗﻮﻡ ﺳﮯ ﮨﻮﺗﺎ ﮨﮯ ﺟﺲ ﮐﮯ ﮨﺎﺗﮫ ﻣﯿﮟ ﻧﻈﺎﻡ ﻋﺎﻟﻢ ﮐﯽ ﺑﺎﮒ ﺩﯼ ﺟﺎﺗﯽ ﮨﮯ ﺗﺎﮐﮧ ﮐﺎﺭﺧﺎﻧﮧِ ﮐﺎﺋﻨﺎﺕ ﺩﺭﮨﻢ ﺑﺮﮨﻢ ﻧﮧ ﮨﻮﻧﮯ ﭘﺎﺋﮯ . ﺑﻨﯽ ﺍﺳﺮﺍﺋﯿﻞ ﺍﺱ ﻋﮩﺪ ﭘﺮ ﻗﺎﺋﻢ ﻧﮧ ﺭﮨﮯ ۔ ﺍﻥ ﮐﮯ ﺍﻧﺪﺭ ﺩﻭﻟﺖ ﻭ ﺛﺮﻭﺕ ، ﺗﺨﺖ ﻭ ﺗﺎﺝ ﺍﻭﺭ ﻣﺬﮨﺒﯽ ﭘﯿﺸﻮﺍﺋﯽ ﮐﺎ ﻏﺮﻭﺭ ﭘﯿﺪﺍ ﮨﻮ ﮔﯿﺎ ۔ ﭘﮭﺮ ﺍنھوں ﻧﮯ ﺍﺱ ﻧﺸﮧ ﻣﯿﮟ ﺍﺣﮑﺎﻡ ﺧﺪﺍﻭﻧﺪﯼ ﮐﯽ ﻧﺎ ﻓﺮﻣﺎﻧﯽ ﮐﯽ . ﺍﻧﺒﯿﺎﺀ ﺍﻭﺭ ﭘﯿﻐﻤﺒﺮ ﺍﻥ ﮐﯽ ﺗﺬﮐﯿﺮ ﺍﻭﺭ ﺗﺠﺪﯾﺪِ ﻋﮩﺪ ﮐﮯ لئے ﺁﺋﮯ ﺗﻮ ﺍنھوں ﻧﮯ ﺍنھیں ﭨﮭﮑﺮﺍ ﺩﯾﺎ ، ﺑﻠﮑﮧ ﺍﻥ ﻣﯿﮟ ﺳﮯ ﺑﻌﺾ ﮐﻮ ﻗﺘﻞ ﺑﮭﯽ ﮐﺮ ﮈﺍﻻ ، ﺍﻧﺠﺎﻡ ﮐﺎﺭ ﺍﻥ ﮐﯽ ﺗﻤﺎﻡ ﻋﺰﺕ ﻭ ﺛﺮﻭﺕ ﭼﮭﻦ ﮔﺌﯽ ﺍﻭﺭ ﺑﺎﺭﮨﺎ ﺍﯾﺴﺎ ﮨﻮﺍ ﮐﮧ ﺍنھیں ﻇﺎﻟﻢ ﺑﺎﺩﺷﺎﮨﻮﮞ ﮐﮯ ﺫﺭﯾﻌﮧ ﻋﺒﺮﺗﻨﺎﮎ ﺗﺒﺎﮨﯽ ﺳﮯ ﺩﻭ ﭼﺎﺭ ﮨﻮﻧﺎ ﭘﮍﺍ ، ﻧﺒﻮﺕ ﺑﮭﯽ ﮨﻤﯿﺸﮧ ﺍﺱ ﻗﻮﻡ ﻣﯿﮟ ﺁﺗﯽ ﮨﮯ ﺟﺴﮯ ﻧﻮﺍﺯﻧﺎ ﻣﻨﻈﻮﺭ ﮨﻮﺗﺎ ﮨﮯ ، ﺁﺧﺮﯼ ﭘﯿﻐﻤﺒﺮ ﺣﻀﺮﺕ ﻣﺤﻤﺪ ﺭﺳﻮﻝ ﷺ ﺑﻨﯽ ﺍﺳﺮﺍﺋﯿﻞ ﻣﯿﮟ ﻣﺒﻌﻮﺙ ﮨﻮﺋﮯ ۔ ﺁﭖ ﺭﺣﻤﺖ ﻋﺎﻟﻢ ﺑﻦ ﮐﺮ ﺁﺋﮯ ﺗﮭﮯ ﺍﺏ ﺑﮭﯽ ﻣﻮقعہ ﺗﮭﺎ ﮐﮧ ﻭﮦ ﺁﺳﻤﺎﻧﯽ ﺑﺎﺩﺷﺎﮨﺖ ﮐﯽ ﺑﺸﺎﺭﺕ ﺳﻨﺎﻧﮯ ﻭﺍﻟﮯ ﭘﺮ ﺍﯾﻤﺎﻥ ﻻ ﮐﺮ ﺍﭘﻨﯽ ﮐﮭﻮﺋﯽ ﮨﻮﺋﯽ ﻋﺰﺕ ﺩﻭﺑﺎﺭﮦ ﺣﺎﺻﻞ ﮐﺮ ﻟﯿﺘﮯ ﻣﮕﺮ ﻏﺮﻭﺭ ﻭ ﺗﮑﺒﺮ ﮐﺎ ﻧﺸﮧ ﺍﯾﺴﺎ ﻧﮧ ﺗﮭﺎ ﺟﻮ ﺍﺗﺮ ﺟﺎﺗﺎ ۔ ﺁﺧﺮ ﺍنھوں ﻧﮯ ﺍﺱ موقعہ ﮐﻮ ﺑﮭﯽ ﮐﮭﻮ ﺩﯾﺎ . ﻣﺨﺘﺼﺮ ﯾﮧ ﮐﮧ ﺑﻨﯽ ﺍﺳﺮﺍﺋﯿﻞ ﮐﯽ ﺗﺎﺭﯾﺦ ﭘﮍﮬﻨﮯ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﮨﻢ ﺍﺱ ﻧﺘﯿﺠﮧ ﭘﺮ ﭘﮩﻨﭽﺘﮯ ﮨﯿﮟﮐﮧ جب ﻃﻐﯿﺎﻥ ﻭ ﺳﺮ ﮐﺸﯽ ﺳﮯ ﺩﻟﻮﮞ ﮐﯽ حقیقی ﺻﻼﺣﯿﺖ ﮐﮭﻮ ﺟﺎﺗﯽ ﮨﮯ تو ﻗﻠﻮﺏ ﭘﺮ ﺍﺱ ﻗﺪﺭ ﭘﺮﺩﮮ ﭘﮍ ﺟﺎﺗﮯ ﮨﯿﮟ ﮐﮧ ﺍﻥ ﻣﯿﮟ ﺧﯿﺮ ﮐﮯ ﮔﮭﺴﻨﮯ ﮐﯽ ﮔﻨﺠﺎﺋﺶ ﺑﺎﻗﯽ ﻧﮩﯿﮟ ﺭﮨﺘﯽ . ﻃﻐﯿﺎﻥ ﻭ ﺳﺮﮐﺸﯽ ﻗﻮﻣﻮﮞ ﮐﯽ ﮨﻼﮐﺖ ﺍﻭﺭ ﺩﻧﯿﺎ ﻭ ﺁﺧﺮﺕ ﺩﻭﻧﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺫﻟﺖ ﻭ ﺭﺳﻮﺍﺋﯽ ﮐﺎ ﺑﺎﻋﺚ ﮨﮯ ﯾﮩﯽ ﻭﺟﮧ ﮨﮯ ﮐﮧ ﻣﺴﻠﻤﺎﻧﻮﮞ ﮐﻮ ﺑﺎﺭﮨﺎ ﺍﺱ ﺳﮯ ﺭﻭ ﮐﺎ گیا ہے کہ ” ﻓَﭑﺳۡﺘَﻘِﻢۡ ﻛَﻤَﺎٓ ﺃُﻣِﺮۡﺕَ ﻭَ ﻣَﻦ ﺗَﺎﺏَ ﻣَﻌَﻚَ ﻭَ ﻟَﺎ ﺗَﻄۡﻐَﻮۡﺍْۚ ” ﺗﻮ ﺗﻢ ﺟﻤﮯ ﺭﮨﻮ ﺟﯿﺴﺎ ﮐﮧ ﺗﻤﮩﯿﮟ ﺣﮑﻢ ﻣﻼ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﻭﮦ ﺑﮭﯽ جنھوں ﻧﮯ ﺗﻤﮩﺎﺭﮮ ﺳﺎﺗﮫ ﺗﻮﺑﮧ کی ﺍﻭﺭ ﮐﺞ ﻧﮧ ﮨﻮﻧﺎ ۔ ‏( ﮬﻮﺩ : 112 ‏)

اسی طرح دنیا میں وہ افراد بھی گذرے ہیں جنھوں نے اپنے کبر کے باعث حق کا انکار کیا اور استہزا کیا اور دنیا میں بھی ہلاک ہوئے اور آخرت بھی بربار کی اور درد ناک عذاب کے مستحق بن گئے اور اہل دنیا کے لئے عبرت کا سامان بن گئے . جیسے نمرود ، قارون ، ہارون ، فرعون ، ہامان اور ابو جہل وغیرہ جن کا قصہ قرآن میں ذکر ہے .

معلوم ہوا کہ تکبر اور اس کے مضر اثرات انسان کی زندگی پر بھی پڑتے ہیں اور آخرت میں بھی بربادی کا سبب بنتے ہیں .

لہذا ضرورت اس بات کی ہے کہ ہم دنیا وما فیھا کی کسی بھی نعمت پر خواہ وہ نیک اولاد ، اونچی ڈگری ، جاہ و منصب ، مقام و مرتبہ ، مختلف علوم پرمہارت یا دولت کی فراوانی ، الغرض دنیا کی کسی بھی نعمت کے حصول پر تکبر اور گھمنڈ نہ کریں بلکہ اللہ کا شکر ادا کریں . کیونکہ جو چیز عطا ہوئی ہے وہ اللہ کی ہے جو ایک آزمائش ہے . جسے جب چاہے اللہ تعالیٰ لے سکتا ہے اور اسے یہ قدرت حاصل ہے اور انسان دنیا میں کتنا ہی کیوں نہ جی لے آخر جو مٹی سے آیا تھا اسے مٹی میں ہی جانا ہے .پھر تکبر اور گھمنڈ کیوں ؟؟؟

اللہ تعالیٰ ہم سبھوں کو اپنی عطا کردہ تمام نعمتوں سے صحیح استفادہ کی توفیق عطا فرمائے اور تکبر جیسے مہلک مرض سے ہم سبھوں کی حفاظت فرمائے . آمین .

--Advertisement--

اظہارخیال کریں

Please enter your comment!
Please enter your name here