ساس اور بَھُو کے جھگڑے اسباب و حل

0
1657

راقم سطور : محمد زبیر ندوی شیروری

گھر افراد سے تشکیل پاتا ہے اور وہ مرد و زن کی سکونت کا مرکز ہوتا ہے . انسان پوری زندگی اپنے گھر والوں کے ساتھ مل جل کر رہنا چاہتا ہے . اس دوران کبھی آپسی بول چال میں سختی اور رہن سہن میں اخلاقی گراوٹ جیسی صورتیں پیش آتی رہتی ہیں جن سے آپس میں کچھ نہ کچھ رنجشیں ہوتی رہتی ہیں . پھر اس کے نتیجہ میں لڑائی جھگڑے سب و شتم حتی کہ دست وگریباں تک نوبت پہونچ جاتی ہے .کبھی کبھار یہ چیزیں ہمیشہ کی دوری کا بھی باعث بنتی ہیں.جسے ایک سہل تمثیل میں سمجھا جا سکتا ہے کہ اگر کسی بڑے برتن میں متعدد چھوٹے چھوٹے برتنوں کو یکجا کیا جائے تو ایک دوسرے کے ٹکراؤ سے آوازیں ضرور آتی ہیں . بالکل اسی طرح انسانی میل جول کے دوران بھی کچھ نہ کچھ رنجشیں ہوتی رہتی ہیں اور یہ چیز اللہ نے انسان کی جبلّب و فطرت میں ازل سے رکھی ہے .

ﺟﮩﺎﮞ ﺗﮏ ﺳﺎﺱ ﺍﻭﺭ ﺑﮩﻮ ﮐﮯ ﺟﮭﮕﮍﻭﮞ ﮐﺎ ﺗﻌﻠﻖ ﮨﮯ ﺍﺱ ﮐﯽ ﺑﻨﯿﺎﺩﯼ ﻭﺟﮧ ﮐﻢ ﻋﻠﻤﯽ ﺍﻭﺭ ﺩﯾﻦ ﺳﮯ ﺩﻭﺭﯼ ﮨﮯ ، ﻋﻮﺭﺗﯿﮟ جذباتی ہوتی ہیں اور معمولی معمولی باتوں پر اڑ کر غلط فہمیوں کا شکار ہو جاتی ہیں جس ﮐﯽ ﻭﺟﮧ ﺳﮯ ﺁﭘﺲ ﻣﯿﮟ ﻟﮍﺍﺋﯿﺎﮞ ﺷﺮﻭﻉ ﮨﻮﺟﺎﺗﯽ ﮨﯿﮟ ، ﺍﻥ ﻏﻠﻂ ﻓﮩﻤﯿﻮﮞ ﮐﻮ ﺩﻭﺭ ﮐﺮﻧﺎ ﺧﺎﻭﻧﺪ ﮐﯽ ﺫﻣﮧ ﺩﺍﺭﯼ ﮨﮯ ، ﺧﺎﻭﻧﺪ ﺍﯾﮏ ﺁﻧﮑﮫ ﺳﮯ ﻣﺎﮞ ﮐﺎ ﻋﻤﻞ ﺩﯾﮑﮭﮯ اور ﺩﻭﺳﺮﯼ ﺳﮯ ﺑﯿﻮﯼ ﮐﺎ ، ﺍﯾﮏ ﮐﺎﻥ ﺳﮯ ﻣﺎﮞ ﮐﯽ ﺑﺎﺕ ﺳﻨﮯ اور ﺩﻭﺳﺮﮮ ﺳﮯ ﺑﯿﻮﯼ ﮐﯽ ، ﺍﻟﻠﮧ ﺗﻌﺎﻟﯽٰ ﻧﮯ ﺩﻭﻧﻮﮞ ﺁﻧﮑﮭﻮﮞ ﺍﻭﺭ ﺩﻭﻧﻮﮞ ﮐﺎﻧﻮﮞ ﮐﮯ ﺩﺭﻣﯿﺎﻥ ﺩﻣﺎﻍ ﺭﮐﮭﺎ ﮨﮯ۔ ﺍﺏ ﻭﮦ ﺍﭘﻨﮯ ﺩﻣﺎﻍ ﺳﮯ ﺳﻮﭺ ﮐﺮ ﻓﯿﺼﻠﮧ ﮐﺮﮮ ﮐﮧ ﺍﻋﺘﺪﺍﻝ کی ﺭﺍﮦ ﮐﻮنسی ﮨﮯ ﺟﺐ ﺧﺎﻭﻧﺪ ﯾﮧ ﺫﻣﮧ ﺩﺍﺭﯼ ﺳﻨﺒﮭﺎﻝ ﻟﮯ ﮔﺎ تو ﻭﮦ ﺩﻭﻧﻮﮞ ﮐﻮ ﺍﻟﺠﮭﻨﮯ ﮐﺎ ﻣﻮﻗﻊ ﻧﮧ ﺩﮮ ﮔﺎ ۔ ﻏﯿﺮ ﺟﺎﻧﺒﺪﺍﺭ ﮨﻮﮐﺮ ﻓﯿﺼﻠﮧ ﮐﺮﮮ ﮔﺎ ﺗﻮ ﮔﮭﺮ ﮐﺎ ﻣﺎﺣﻮﻝ ﺧﻮﺷﮕﻮﺍﺭ ﮨﻮ ﺟﺎئے گا ۔ ﺑﮩﻮ ﮐﻮ ﭼﺎہئے ﮐﮧ ﻭﮦ ﺳﺎﺱ ﮐﻮ ﻣﺎﮞ ﮐﺎ ﺩﺭﺟﮧ ﺩﮮ ﺍﻭﺭ ﺳﺎﺱ ﺍﭘﻨﯽ ﺑﮩﻮ ﮐﻮ ﺍﭘﻨﯽ ﺑﯿﭩﯽ ﺳﻤﺠﮭﮯ . ﺍﮔﺮ ﮐﻮﺋﯽ ﻣﺎﮞ ﺍﭘﻨﯽ ﺑﯿﭩﯽ ﮐﻮ ﮔﮭﺮ ﻣﯿﮟ ﺗﮭﭙﮍ ﺑﮭﯽ ﻟﮕﺎﺩﮮ ﺗﻮ ﺑﯿﭩﯽ ﺧﺎﻣﻮﺵ ﮨﻮ ﺟﺎﺗﯽ ﮨﮯ لیکن ﺍﮔﺮ ﺳﺎﺱ ﺍﺻﻼﺡ ﮐﯽ ﺑﺎﺕ ﮐﺮﮮ ﺗﻮ ﺑﮩﻮ ﺍﺱ ﮐﮯ ﺍﻭﭘﺮ ناراضگی کا اظہار کرتی ہے ، اگر بہو ﻣﺎﮞ ﮐﺎ ﺗﮭﭙﮍ ﺑﺮﺩﺍﺷﺖ ﮐﺮﺳﮑﺘﯽ ﮨﮯ ﺗﻮ ﺳﺎﺱ ﮐﯽ ﺗﻨﻘﯿﺪ ﮐﻮ ﺩﻝ ﻣﯿﮟ ﺟﮕﮧ ﺩﯾﻨﮯ کے ﺑﺠﺎﺋﮯ ﺳﺎﺱ پر ﺍﺟﺎﺭﮦ ﺩﺍﺭﯼ ﮐﯽ راہ اختیار کرتی ہے ﺍﻭﺭ جبراً اس پر ﺍﭘﻨﺎ ﺣﮑﻢ ﭼﻼﻧﺎ ﭼﺎﮨﺘﯽ ہے ۔ دوسری طرف ﺑﯿﭩﮯ ﮐﯽ ﺷﺎﺩﯼ کے بعد ساس کو ﺑﮩﻮ ﮐﯽ ﺟﺎﺋﺰ ﺿﺮﻭﺭﯾﺎﺕ ﮐﺎ ﺑﮭﯽ ﺧﯿﺎﻝ ﻧﮩﯿﮟ ﺭہتا اور اس کے ﺫﮨﻦ ﻣﯿﮟ ہر وقت محتاجی ﮐﯽ ﺑﺎﺕ ﺳﻤﺎ ﺟﺎﺗﯽ ﮨﮯ ﮐﮧ ﻣﯿﺮﺍ ﺑﯿﭩﺎ ﮨﺮ ﺑﺎﺕ کے لئے ﻣﺠﮫ ﺳﮯ ﺍﺟﺎﺯﺕ ﻟﮯ ﮔﺎ ﭘﮭﺮ ﺑﯿﻮﯼ ﺳﮯ ﺑﺎﺕ ﮐﺮﮮ ﮔﺎ ۔ ﯾﮧ ﭼﯿﺰﯾﮟ ﻓﺴﺎﺩ ﮐﯽ ﺟﮍ ﺑﻦ ﺟﺎﺗﯽ ﮨﯿﮟ ، ﮐﭽﮫ ﻋﻮﺭﺗﯿﮟ ﺟﺐ ﺑﮩﻮ ﺑﻨﻨﮯ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ اپنے مقام و درجہ کو بڑھاتے ہوئے ﺳﺎﺱ ﺑﻨﺘﯽ ﮨﯿﮟ ﺗﻮ ﺍﻥ ﮐﮯ یہاں ﺍﻧﺼﺎﻑ ﻧﮩﯿﮟ ﺭﮨﺘﺎ ﺑﻠﮑﮧ ﺍﭘﻨﯽ ﭼﻮدھرﺍﮨﭧ ﺍﻭﺭ ﻣﻦ ﻣﺎﻧﯽ کے لئے ﺍﭘﻨﺎ ﮨﺮ ﺟﺎﺋﺰ ﻭ ﻧﺎﺟﺎﺋﺰ ﺣﮑﻢ کو بجا لانے پر مجبور ﮐﺮﺗﯽ ہیں ﺍﻭﺭ ﺑﮩﻮ ﺳﮯ ﮐﮩﺘﯽ ہیں ﮐﮧ ﺩﯾﮑﮭﻮ ﺗﻢ ﻣﯿﺮﮮ ﺳﺎﻣﻨﮯ ﮐﺘﻨﯽ ﻣﺤﺘﺎﺝ ﮨﻮ ، کبھی یہ اظہار الفاظ کی شکل میں ہوتا ہے تو کبھی حرکات وسکنات کی صورت میں . ﮐﭽﮫ ﻋﻮﺭﺗﻮﮞ ﮐﻮ ﯾﮧ ﮔﻠﮧ ﺭﮨﺘﺎ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺟﺐ ﻣﯿﮟ ﺑﮩﻮ ﺗﮭﯽ تو ﺳﺎﺱ ﺍﭼﮭﯽ ﻧﮧ ﻣﻠﯽ ﺍﻭﺭ جب میں ﺳﺎﺱ ﺑﻨﯽ ﺗﻮ ﺑﮩﻮ ﺍﭼﮭﯽ ﻧﮧ ﻣﻠﯽ ۔ ﺳﺎﺱ کے لئے ﺳﻮﭼﻨﮯ ﮐﺎ ﻣﻘﺎﻡ ﮨﮯ ﮐﮧ جب اس کی ﺑﯿﭩﯽ کسی ﮔﻨﺎﮦ ﮐﺒﯿﺮﮦ کا ارتکاب کرتی ہے ﺗﻮ ﺍﭘﻨﯽ ﺑﯿﭩﯽ ﮐﺎ ﻋﯿﺐ ﭼﮭﭙﺎﺗﯽ ﭘﮭﺮﺗﯽ ﮨﮯ ، ﻟﯿﮑﻦ اگر ﺧﺪﺍﻧﺨﻮﺍﺳﺘﮧ ﺑﮩﻮ ﺳﮯ ﮐﻮﺋﯽ ﮐﮭﺎﻧﮯ ﭘﮑﺎﻧﮯ ﮐﯽ ﻣﻌﻤﻮﻟﯽ ﻏﻠﻄﯽ ﮨﻮجاتی ہے ﺗﻮ وہ ﺩﻭﺳﺮﻭﮞ ﮐﻮ ﺑﺘﻼﺗﯽ پھرتی ہے ۔ ﯾﮧ ﮐﺘﻨﯽ ﻧﺎﺍﻧﺼﺎﻓﯽ ﮐﯽ ﺑﺎﺕ ﮨﮯ ﺟﺲ ﺩﻥ ﺳﺎﺱ،ﺍﭘﻨﯽ ﺑﮩﻮ ﮐﻮ ﺑﯿﭩﯽ ﺳﻤﺠﮭﻨﮯ ﻟﮓ ﺟﺎﺋﮯ ﮔﯽ ﺍﻭﺭ ﺑﮩﻮ ﺍﭘﻨﯽ ﺳﺎﺱ ﮐﻮ ﻣﺎﮞ ﮐﺎ ﻣﻘﺎﻡ ﺩﮮ ﮔﯽ ﺗﻮ ﮔﮭﺮ ﮐﯽ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﭘُﺮﺳﮑﻮﻥ ﮨﻮﺟﺎﺋﮯ ﮔﯽ ۔ ﻣﺎﮞ ﺍﻭﺭ ﺑﯿﭩﯽ ﮐﮯ ﺩﺭﻣﯿﺎﻥ ﻧﻔﺮﺗﯿﮟ ﻧﮩﯿﮟ ﻣﺤﺒﺘﯿﮟ ﺟﻨﻢ ﻟﯿﺘﯽ ﮨﯿﮟ ۔ ﺍﯾﮏ ﺑﺰﺭﮒ ﻧﮯ ﺣﺎﻻﺕ ﮐﮯ ﮨﺎﺗﮭﻮﮞ ﻣﺠﺒﻮﺭ ﮨﻮﮐﺮ ﺑﯿﻮﯼ ﮐﻮ ﻃﻼﻕ دے دی ۔ ﮐﺴﯽ ﻧﮯ ﻭﺟﮧ ﭘﻮﭼﮭﯽ ﺗﻮ ﺧﺎﻣﻮﺷﯽ ﺍﺧﺘﯿﺎﺭ ﮐﯽ ۔ ﺑﺲ ﺍﺗﻨﺎ ﻓﺮﻣﺎﯾﺎ ﮐﮧ ﺟﺐ ﺗﮏ ﻭﮦ ﻣﯿﺮﯼ ﺑﯿﻮﯼ ﺗﮭﯽ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﮐﺒﮭﯽ ﺍﺱ ﮐﯽ ﻏﯿﺒﺖ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﯽ ﺗﮭﯽ ﺍﻭﺭ ﺍﺏ ﺗﻮ ﻭﮦ ﺍﺟﻨﺒﯽ ﮨﻮﮔﺌﯽ ﻣﯿﮟ ﺍﺱ ﮐﯽ ﻏﯿﺒﺖ ﮐﯿﺴﮯ ﮐﺮﺳﮑﺘﺎ ﮨﻮﮞ ۔

ﻧﯿﮏ ﺑﯿﻮﯼ ﮐﯽ ﭼﻨﺪ اہم صفات یہ ﮨﯿﮟ کہ جب ﺧﺎﻭﻧﺪ ﺍﺱ ﮐﯽ ﻃﺮﻑ ﺩﯾﮑﮭﮯ ﺗﻮ ﺍﺱ ﮐﺎ ﺩﻝ ﺧﻮﺵ ﮨﻮﺟﺎﺋﮯ . ﺧﺎﻭﻧﺪ ﮐﺴﯽ ﺑﺎﺕ ﭘﺮ ﻗﺴﻢ کھائے ﺗﻮ ﻭﮦ ﺍﺱ ﮐﯽ ﻗﺴﻢ ﭘﻮﺭﯼ ﮐﺮﮮ ۔ جب ﺧﺎﻭﻧﺪ کسی جائز چیز ﮐﺎ ﺣﮑﻢ دے تو اسے بجا لائے ۔ ﺧﺎﻭﻧﺪ کی عدم موجودگی میں ﺍﺱ ﮐﮯ ﻣﺎﻝ ﺍﻭﺭ ﺁﺑﺮﻭ ﮐﯽ ﺣﻔﺎﻇﺖ ﮐﺮﮮ .

ﮨﺮ ﻭﻗﺖ ﺩﻭﺳﺮﻭﮞ ﮐﯽ ﻏﻠﻄﯿﻮﮞ ﭘﺮ ﻧﻈﺮ ﺭﮐﮭﻨﺎ ﺍﻭﺭ ﺍﻥ ﮐﯽ ﺍﭼﮭﺎﺋﯿﺎﮞ ﻧﻈﺮ ﺍﻧﺪﺍﺯ ﮐﺮﺩﯾﻨﺎ ﺑُﺮﯼ ﻋﺎﺩﺕ ﮨﮯ ۔ ﮐﭽﮫ ﻟﻮﮒ ﺩﻭﺳﺮﻭﮞ ﮐﯽ برائیوں ﭘﺮ ﻧﻈﺮ ﺭﮐﮭﺘﮯ ﮨﯿﮟ اور ان کی بھلائیوں ﮐﻮ ﻧﻈﺮﺍﻧﺪﺍﺯ ﮐﺮﺩﯾﺘﮯ ﮨﯿﮟ ، ﺧﺎﻭﻧﺪ ، بیوی اور ﺳﺴﺮ اور ساس ﮐﻮ ہمیشہ اپنی ﺳﻮﭺ مثبت رکھنی چاہئے ۔

ﺑﯿﻮﯼ ﮐﯽ ﺗﯿﻦ ﺑﻨﯿﺎﺩﯼ ﺿﺮﻭﺭﺗﯿﮟ ﭘﻮﺭﯼ ﮐﺮﻧﺎ ﺷﻮﮨﺮ ﮐﺎ ﻓﺮﺽ ﮨﮯ ۔ اس کو ﺗﺤﻔﻆ فراہم کرنا ، اپنی توجہات اس پر مرکوز کرنا اور اس کی ﺣﻮﺻﻠﮧ ﺍﻓﺰﺍﺋﯽ کرنا ۔ ﺍﮔﺮ ﺍﻥ ﻣﯿﮟ ﺳﮯ ﮐﺴﯽ ﺍﯾﮏ ﭘﮩﻠﻮ ﻣﯿﮟ ﮐﻤﯽ ﺭﮦ ﮔﺌﯽ ﺗﻮ ﮔﮭﺮ ﺍﺟﮍﻧﮯ ﮐﺎ ﺧﻄﺮﮦ ﮨﮯ ۔ ﺑﻌﺾ ﺍﻭﻗﺎﺕ ﺧﺎﻭﻧﺪ ﮐﭽﮫ ﺍﯾﺴﯽ ﻏﻠﻄﯿﺎﮞ ﮐﺮ ﺑﯿﭩﮭﺘﺎ ﮨﮯ ﮐﮧ ﮔﮭﺮ ﻣﯿﮟ ﻟﮍﺍﺋﯽ ﺟﮭﮕﮍﮮ ﮐﯽ ﻓﻀﺎ ﭘﯿﺪﺍ ﮨﻮﺟﺎﺗﯽ ﮨﮯ ﺍﻥ ﺳﮯ ﺍﺟﺘﻨﺎﺏ ﮐﯿﺎ ﺟﺎﺋﮯ ۔ ﺑﯿﻮﯼ ﮐﻮ ﻧﻈﺮﺍﻧﺪﺍﺯ ﮐﺮﺩﯾﻨﺎ ، ﺑﺎﺕ ﺑﺎﺕ ﭘﺮ ﻃﻼﻕ ﮐﯽ ﺩﮬﻤﮑﯽ ﺩﯾﻨﺎ ، ﺩﻭﺳﺮﯼ ﺷﺎﺩﯼ ﮐﯽ ﺩﮬﻤﮑﯽ ﺩﯾﻨﺎ ، ﺩﻭﺳﺮﻭﮞ ﮐﮯ ﺳﺎﻣﻨﮯ ﺑﯿﻮﯼ ﮐﯽ ﺑﮯ ﻋﺰﺗﯽ ﮐﺮﻧﺎ ، ﺑﯿﻮﯼ ﮐﻮ ﻭﻗﺖ ﻧﮧ ﺩﯾﻨﺎ ، ﺑﯿﻮﯼ ﭘﺮ ﭘﺎﺑﻨﺪﯾﺎﮞ ﻟﮕﺎﻧﺎ ﺍﻭﺭ ﺍﭘﻨﮯ آپ کو ﺁﺯﺍﺩ رکھنا ، ﮨﺮ ﺑﺎﺕ ﭘﺮ ﻧﮑﺘﮧ ﭼﯿﻨﯽ ﮐﺮﻧﺎ ، ﺑﯿﻮﯼ ﭘﺮ ﺍﻟﺰﺍﻡ ﻟﮕﺎﻧﺎ ، ﺑﯿﻮﯼ ﮐﮯ ﺭﺷﺘﮧ ﺩﺍﺭﻭﮞ ﺳﮯ ﺑﺪﺳﻠﻮﮐﯽ ﮐﺮﻧﺎ وغیرہ . یہ وہ خصلتیں ہیں جن سے کدورتیں اور نفرتیں ہی جنم لیتی ہیں . لہذا ضرورت اس بات کی ہے کہ مذکورہ بالا باتوں کو ملحوظ رکھا جائے اور ﮔﮭﺮ کے ﻣﺎﺣﻮﻝ کو ﺧﻮﺷﮕﻮﺍﺭ بنانے کی کوشش کی جائے ۔

شوہر کو چاہئے کہ وہ ﮔﮭﺮ ﻣﯿﮟ ﻣﺴﮑﺮﺍﺗﮯ ﭼﮩﺮﮮ ﺳﮯ ﺩﺍﺧﻞ ﮨﻮ ﯾﮧ ﻧﺒﯽ ﺻﻠﯽ ﺍﻟﻠﮧ ﻋﻠﯿﮧ ﻭ ﺳﻠﻢ ﮐﯽ ﺳﻨﺖ ﻣﺒﺎﺭکہ ﮨﮯ ۔ ﺑﯿﻮﯼ ﮐﮯ ﺍﭼﮭﮯ ﮐﺎﻣﻮﮞ ﮐﯽ ﺗﻌﺮﯾﻒ ﮐﺮﮮ ، ﺑﯿﻮﯼ ﮐﮯ ﮐﺎﻣﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺩﻟﭽﺴﭙﯽ ﻟﮯ ، وقتاً ﻓﻮﻗﺘﺎً ﺑﯿﻮﯼ ﮐﻮ ﮨﺪﯾﮧ ﺍﻭﺭ ﺗﺤﻔﮧ ﺩﮮ ، بیوی سے ﺩﻝ ﺟﻮﺋﯽ ﺍﻭﺭ ﺩﻝ ﻟﮕﯽ ﮐﯽ ﺑﺎﺗﯿﮟ ﮐﺮے ، ﮔﮭﺮ ﻣﯿﮟ ﺷﺮعی اصولوں ﮐﯽ ﭘﺎﺑﻨﺪﯼ ﮐﺮﺍئے ، ﺑﺎﻟﺨﺼﻮﺹ ﺑﮯ ﭘﺮﺩﮔﯽ ﮐﯽ ﻧﺤﻮﺳﺖ ﺳﮯ گھر والوں کو بچائے ، ﺯﻭﺟﯿﻦ بیک وقت ﻏﺼﮧ ﻧﮧ ﮐﺮﯾﮟ ‏( ﺍﯾﮏ ﻏﺼﮯ ﻣﯿﮟ ﺁﺋﮯ ﺗﻮ ﺩﻭﺳﺮﺍ ﺑﺮﺩﺍﺷﺖ ﮐﺮﮮ ‏) ﺁﭘﺲ ﻣﯿﮟ ﻧﺎﺭﺍﺿﮕﯽ ﮐﯽ ﺣﺎﻟﺖ ﻣﯿﮟ ﻧﮧ ﺳﻮﺋﯿﮟ ۔ اسی طرح ﺍﺯﺩﻭﺍﺟﯽ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﮐﻮ ﺧﻮﺷﮕﻮﺍﺭ ﺍﻭﺭ ﭘﺮﺳﮑﻮﻥ ﺑﻨﺎﻧﮯ کے لئے ﺑﯿﻮﯼ ﮐﻮ ﺑﮭﯽ ﭼﻨﺪ ﺑﺎﺗﻮﮞ ﮐﺎ ﺧﯿﺎﻝ ﺭﮐﮭﻨﺎ ﭼﺎہئے ﻣﺜﻼً ﻭﮦ ﺍﭘﻨﮯ ﺧﺎﻭﻧﺪ ﮐﺎ ﺍﻋﺘﻤﺎﺩ ﺣﺎﺻﻞ ﮐﺮﮮ اور اپنی محبت سے ﺧﺎﻭﻧﺪ ﮐﻮ مسخر ﮐﺮﮮ ، ﻟﮕﺎﺋﯽ ﺑﺠﮭﺎﺋﯽ ﺍﻭﺭ ﺳﻨﯽ ﺳﻨﺎﺋﯽ ﺑﺎﺗﻮﮞ پر دھیان دینے ﺳﮯ ﭘﺮﮨﯿﺰ ﮐﺮﮮ ۔ ﺑﭽﻮﮞ ﮐﯽ ﺗﺮﺑﯿﺖ ﮐﺎ ﺧﺎﺹ ﺧﯿﺎﻝ ﺭﮐﮭﮯ ۔ ﺧﺎﻭﻧﺪ ﮐﮯ ﻗﺮﺍﺑﺖ ﺩﺍﺭﻭﮞ ﺳﮯ ﺍﭼﮭﺎ ﺳﻠﻮﮎ ﮐﺮﮮ ، شوہر کے ﺭﺷﺘﮧ ﺩﺍﺭﻭﮞ ﮐﮯ یہاﮞ ﺻﻠﮧ ﺭﺣﻤﯽ ﮐﯽ ﻧﯿﺖ ﺳﮯ ﺟﺎﺋﮯ ، ﺧﺎﻭﻧﺪ ﮐﻮ ﭘﺮﯾﺸﺎﻧﯽ ﮐﮯ ﻭﻗﺖ ﺗﺴﻠﯽ ﺩﮮ ، ﺷﻮﮨﺮ ﮐﻮ ﺻﺪﻗﮧ ﺧﯿﺮﺍﺕ ﮐﯽ ﺗﺮﻏﯿﺐ ﺩﮮ ، ﮐﮭﺎﻧﮯ ﮐﻮ ﺫٍﮐﺮ کے ساتھ ﭘﮑﺎﺋﮯ ، ﮐﺎﻡ ﮐﻮ ﻭﻗﺖ ﭘﺮ ﺳﻤﯿﭩﻨﮯ ﮐﯽ ﻋﺎﺩﺕ ﮈﺍﻟﮯ ، ﮔﮭﺮ ﮐﻮ ﺻﺎﻑ ﺳﺘﮭﺮﺍ ﺭﮐﮭﮯ ، ﻓﻮﻥ ﭘﺮ ﻣﺨﺘﺼﺮ ﺑﺎﺕ ﮐﺮﻧﮯ ﮐﯽ ﻋﺎﺩﺕ ﮈﺍﻟﮯ ، ﺿﺮﻭﺭﺕ ﮐﯽ ﭼﯿﺰﻭﮞ ﮐﻮ ﺳﻨﺒﮭﺎﻝ ﮐﺮﺭﮐﮭﮯ ، ﺧﺎﻭﻧﺪ ﮐﻮ ﺩﻋﺎؤﮞ کے ﺴﺎﺗﮫ ﺭﺧﺼﺖ ﮐﺮﮮ ، ﺧﺎﻭﻧﺪ ﮐﯽ ﺿﺮﻭﺭﺕ ﭘﻮﺭﯼ ﮐﺮﻧﮯ ﻣﯿﮟ پس و پیش ﻧﮧ ﮐﺮﮮ ، ﺍﭘﻨﮯ ﺩﻝ ﮐﺎ ﻏﻢ ﻓﻘﻂ ﺍﻟﻠﮧ ہی ﺳﮯ ﺑﯿﺎﻥ ﮐﺮﮮ ﺟﮩﺎﮞ ﺧﺎﻟﻖ ﮐﯽ ﻧﺎﻓﺮﻣﺎﻧﯽ ﮨﻮ ﻭﮨﺎﮞ ﻣﺨﻠﻮﻕ ﮐﯽ ﺍﻃﺎﻋﺖ ﻧﮧ ﮐﺮﮮ ۔ﺷﻮﮨﺮ ﮐﺎ ﺩﻝ ﺟﯿﺘﻨﮯ کے لئے ﺑﯿﻮﯼ کے لئے ﺿﺮﻭﺭﯼ ﮨﮯ ﮐﮧ ﻭﮦ ﺧﺎﻭﻧﺪ ﺳﮯ ﻋﺰﺕ ﮐﮯ ﺻﯿﻐﮯ ﻣﯿﮟ ﺑﺎﺕ ﮐﺮﮮ ، ﻋﻮﺭﺕ ﺍﭘﻨﮯ ﺍﻧﺪﺭ ﺻﺒﺮ ﻭ ﺗﺤﻤﻞ ﭘﯿﺪﺍ ﮐﺮﮮ ، ﺍﭘﻨﯽ ﻏﻠﻄﯽ ﻣﺎﻥ ﻟﯿﻨﮯ ﻣﯿﮟ ﻋﻈﻤﺖ ﺍﻭﺭ ﺧﺎﻣﻮﺷﯽ ﻣﯿﮟ ﻋﺎﻓﯿﺖ سمجھے ۔ ﮐﻔﺎﯾﺖ ﺷﻌﺎﺭﯼ ﺍﺧﺘﯿﺎﺭ ﮐﺮﮮ ﮨﺮ ﺣﺎﻝ ﻣﯿﮟ ﺷﻮﮨﺮ ﮐﺎ ﺳﺎﺗﮫ ﺩﮮ اور ﺧﺎﻭﻧﺪ ﮐﯽ ﻧﺎﺷﮑﺮﯼ ﻧﮧ ﮐﺮﮮ ، ﺷﻮﮨﺮ ﮐﯽ ﺑﮯ ﺭﺧﯽ ﮐﺎ ﻋﻼﺝ ﺧﻮﺩ ﮐﺮﮮ ، ﺧﺎﻭﻧﺪ ﮐﮯ ﺍﻟﻮﺩﺍﻉ ﺍﻭﺭ ﺍﺳﺘﻘﺒﺎﻝ میں محبت اور شفقت سے پیش آئے ۔ اﻟﻠﮧ ﺗﻌﺎﻟﯽٰ ﮐﺎ ﻣﺤﺒﻮﺏ ﺑﻨﻨﮯ کے لئے ﻣﺮﺩ پر ﺿﺮﻭﺭﯼ ﮨﮯ ﮐﮧ ﻧﺒﯽ ﺻﻠﯽ ﺍﻟﻠﮧ ﻋﻠﯿﮧ ﻭ ﺳﻠﻢ ﮐﮯ ﮨﺮ ﻋﻤﻞ ﮐﯽ ﺍﺗﺒﺎﻉ ﮐﺮﮮ ﺟﺒﮑﮧ ﻋﻮﺭﺗﻮﮞ ﮐﻮ ﯾﮧ ﺭﺗﺒﮧ ﻏﯿﺮ ﺳﮯ ﻧﻈﺮﯾﮟ ﮨﭩﺎﻧﮯ ، ﺧﺎﻭﻧﺪ ﭘﺮ ﻧﻈﺮﯾﮟ ﺟﻤﺎﻧﮯ ﺍﻭﺭ ﭘﯿﺎﺭ ﻣﺤﺒﺖ ﺳﮯ ﺍﺱ ﮐﺎ ﺩﻝ ﻟﺒﮭﺎﻧﮯ ﺳﮯ ﺣﺎﺻﻞ ﮨﻮﺗﺎ ﮨﮯ ۔ ﯾﮧ ﺑﮭﯽ ﯾﺎﺩ ﺭﮐﮭﯿﮟ ﮐﮧ ﻗﯿﺎﻣﺖ ﮐﮯ ﺩﻥ ﺍﯾﮏ ﺑﮯ ﻋﻤﻞ ﻋﻮﺭﺕ ﭼﺎﺭ ﻣﺤﺮﻡ ﻣﺮﺩﻭﮞ ﮐﻮ ﺟﮩﻨﻢ ﻣﯿﮟ ﻟﮯ ﺟﺎﺋﮯ ﮔﯽ ﺧﺎﻭﻧﺪ ، ﺑﮭﺎﺋﯽ ، ﻭﺍﻟﺪ ﺍﻭﺭ ﺑﯿﭩﮯ ﮐﻮ . ﻭﮦ ﮐﮩﮯ ﮔﯽ ﮐﮧ ﯾﺎﺍﻟﻠﮧ ! ﻭﮦ ﺧﻮﺩ ﺗﻮ ﻧﯿﮏ ﺑﻨﮯ ﻟﯿﮑﻦ ﻣﺠﮭﮯ ﻧﯿﮑﯽ ﮐﺮﻧﮯ کے لئے ﮐﺒﮭﯽ آمادہ نہیں کیا .

لہذا کوشش یہ ہو کہ سب مل کر آپس میں ایک دوسرے کی عزت کریں کیونکہ ہر انسان کو ان دونوں کی اشد ضرورت ہے . جس سے نہ کسی کی دولت ختم ہوتی ہے اور نہ ہی عزت . جانے پھر کیوں لوگ اس سے کتراتے ہیں ؟؟ ایک عزت کرے تو دوسرا محبت کرے . یہ اس لئے کہ عزت دیں گے تو عزت ملے گی ورنہ ذلت . ہر انسان اپنے اندر ایک دوسرے کی قدردانی کی صفت پیدا کر لے تو گھر پر سکون ہی پرسکون رہے گا .

اللہ تعالیٰ سے دعا ہے کہ وہ ہمیں ان باتوں کو سمجھ کر عمل کرنے کی توفیق عطا فرمائے اور ساس و بہو کے مابین محبت قائم فرمائے . آمین .

--Advertisement--

اظہارخیال کریں

Please enter your comment!
Please enter your name here