ماں حقیقت کے آئینہ میں

0
2672

 از:  محمد زبیر ندوی شیروری

ماں! یہ ایک ایسا لفظ ہے جس کی ثنا میں انسان کی قلم طرازی ورقم طرازی اپنے آپ کو عاجز و بے بس پاتی ہوئی نظر آتی ہے ۔ اس ﻟﻔﻆ ﮐﯽ ﺟﺘﻨﯽ ﺑﮭﯽ ﺗﻌﺮﯾﻒ ﮐﯽ ﺟﺎﺋﮯ ﮐﻢ ﮨﮯ ، کیونکہ ﻣﺎﮞ ﺩﻧﯿﺎ میں اللہ ﮐﺎ عطا کردہ ﺍﯾﮏ ایسا ﺍﻧﻤﻮﻝ ، نایاب وغیرمعمولی ﺗﺤﻔﮧ ﮨﮯجسے خریدا نہیں جا سکتا اور نہ ہی اس کی قیمت لگائی جا سکتی ہے ۔ ﺟﺲ ﻧﮯ ﺍﺱ ﮐﯽ ﻗﺪﺭ ﮐﯽ اس نے اپنے آپ کو جنت کا حقدار بنایا اور خوش نصیبوں میں اپنا نام شامل کر لیا ۔

ﻣﺎﮞ وہ ہے جس ﮐﮯ ﻗﺪﻣﻮﮞ ﺗﻠﮯ ﺟﻨﺖ ﮨﮯ.ﺟﺲ ﮔﮭﺮ ﻣﯿﮟ ﻣﺎﮞ ﮨﮯ ﻭﮦ ﮔﮭﺮ ﺟﻨﺖ ﺳﮯ ﮐﻢ ﻧﮩﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﺟﺲ ﮔﮭﺮ ﻣﯿﮟ ﻣﺎﮞ ﻧﮩﯿﮟ ﻭﮦ ﮔﮭﺮ ﻗﺒﺮﺳﺘﺎﻥ ﮐﯽ ﻣﺎﻧﻨﺪ ﮨﮯ ۔ ماں کی محبت وہ محبت ہے جو اپنی اولاد پرکسی بھی قسم کی کوئی تکلیف یا پریشانی کوچند لمحات کے لئے بھی گوارا نہیں کر سکتی لہذا ﺍﮔﺮاولاد پرﮐﻮﺋﯽ ﻣﺼﯿﺒﺖ ﯾﺎ ﮐﻮﺋﯽ ﭘﺮﯾﺸﺎﻧﯽ ﺁﺟﺎئے یا وہ ﺑﯿﻤﺎﺭﮨﻮﺟائے ﺗﻮوہ ﺭﺍﺕ ﺑﮭﺮ ﺟﺎﮒ ﮐﺮہمارا خیال ﺭﮐﮭﺘﯽ ﮨﮯ اور اﭘﻨﮯ ﮨﺎﺗﮫ ﺳﮯ ﮐﮭﺎﻧﺎ ﺑﻨﺎﮐﺮ ﮐﮭﻼﺗﯽ ﮨﮯ ۔

یہ ایک طے شدہ حقیقت ہے کہ ﺟﺲ ﮔﮭﺮﻣﯿﮟ ﺗﻌﻠﯿﻢ ﯾﺎﻓﺘﮧ ﻧﯿﮏ ﻣﺎﮞ ﮨو توﻭﮦ اپنے گھرکوﺍﻧﺴﺎﻧﯿﺖ ﮐﯽ ﺩﺭﺱ ﮔﺎﮦ بنا دیتی ﮨﮯاور بچوں کے اچھے ﻣﺴﺘﻘﺒﻞ کا مسکن بنا دیتی ہے ۔ ماں دﻧﯿﺎ ﮐﺎ ﺳﺐ ﺳﮯ ﺍﻧﻤﻮﻝ ﺯﯾﻮﺭ ﮨﮯ ۔ ﺩﻧﯿﺎ ﮐﺎ ﮐﻮﺋﯽ ﺭﺷﺘﮧ ﻣﺎﮞ ﺳﮯ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﭘﯿﺎﺭﺍ ﻧﮩﯿﮟ ۔ ﻣﺎﮞ ﮐﺎ ﭘﯿﺎﺭ ﺳﺐ ﺳﮯ ﺑﮩﺘﺮﯾﻦ ﺍﻭﺭﺧﻮﺑﺼﻮﺭﺕ ﮨﮯ ، ﺍﮔﺮ ﮐﻮﺋﯽ کسی ﺑﮭﯽ ﻣﯿﺪﺍﻥ ﻣﯿﮟ ﮐﺎﻣﯿﺎﺏ ﮨﻮﻧﺎ ﭼﺎہے ﺗﻮاسے چاہئے کہ وہ ﻣﺎﮞ ﮐﯽ ﺧﺪﻣﺖ ﮐﯿﺎ ﮐﺮے ، کیونکہ خلوص ومحبت کامیابی کا ایک زینہ ہے اوراس کے حصول کا بہترین ذریعہ ﻣﺎﮞ ہی ﮐﯽ ﻣﺤﺒﺖ ہے کیونکہ وہ بے لوث ، ﺍﻧﻤﻮﻝ ، ﭘﺎﮐﯿﺰﮦ ہوتی ہے اورﺧﻮﺩ ﻏﺮﺿﯽ ، ریاکاری اورجاہ و شہرت کی آمیزش سے بالکل پاک اور پرکشش ﮨﻮﺗﯽ ہے ۔ ﺍگر ﺭﻭﺋﮯ ﺯﻣﯿﻦ ﮐﮯ ﻋﺎﺷقوں و ﻣﻌﺸﻮقوں ﮐﯽ ﻣﺤﺒﺖ ﮐا ماں کی محبت سے موازنہ کیا جائے تو وہ اس کے سامنے ہیچ نظر آتی ہے ۔ یہی وجہ ہے کہ آج تک کسی مصنف و مؤلف نے ماں کی محبت پر لکھ کر اسکا حق ادا کرنے کا دعوٰی نہیں کیا ۔ ﮐﯿﻮﻧﮑﮧ ﻣﺎﮞ ﮐﯽ ﻣﺤﺒﺖ ہے ﮨﯽ اﯾﺴﯽ چیزجو ﮨﻤﯿﮟ ﺍﭘﻨﮯ ﭘﯿﭧ ﻣﯿﮟ ﻧﻮ ﻣﺎﮦ ﺗﮏ ﺭﮐﮭﺘﯽ ﮨﮯ ﻃﺮﺡ ﻃﺮﺡ ﮐﯽ ﺗﮑﻠﻔﯿﮟ بڑے ہی تحمل سے ﺟﮭﯿﻠﺘﯽ ﮨﮯ ﻣﮕﺮﺍﻑ ﺗﮏ ﻧﮩﯿﮟ کہتی ۔

ﻗﺮﺑﺎﻥ ﺟﺎئیں ﻣﺎﮞ ﮐﯽ ﻣﻤﺘﺎ ﭘﺮ ﮐﮧ ﺟﺐ ہم ﭘﯿﺪﺍ ﮨﻮﺋﮯ تو ﺍﺱ ﻭﻗﺖ وہ ﻣﻮﺕ ﺍﻭﺭ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﮐﮯ نازک ﻣﺮﺣلہ سے گذر رہی تھی لیکن جوں ہی ہمیں اس کی گود میں رکھا گیا تو وہ ایک لحظہ میں سب کچھ بھول کرہمیں اپنی جنت سمجھنے لگی ﺍﺱ ﮐﯽ ﺧﻮﺷﯿﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﭼﺎﺭ ﭼﺎﻧﺪ ﻟﮓ گئے اورﺍﺱ ﮐﮯ ﭼﮩﺮﮮ ﭘﺮﻣﺴﮑﺮﺍﮨﭧ ﻧﻤﻮﺩﺍﺭ ﮨﻮنے لگی ، وہ ﮐﺒﮭﯽ ہمیں ﺍﭘﻨﮯ ﺳﯿﻨﮯ ﺳﮯ ﻟﮕﺎﺗﯽ تو ﮐﺒﮭﯽ ﺍﭘﻨﮯ ﮨﻮﻧﭩﻮﮞ ﺳﮯ پیار و محبت سے لبریز بوسہ دیتی اورکبھی ﮨﻤﺎﺭﮮ ﻣﻌﺼﻮﻡ ﭼﮩﺮﮮ ﮐﻮ ﭼﻮﻣﺘﯽ، اور کیوں نہ ہو ﻭﮦ ﻣﺎﮞ ﮐﯽ ﻣﺤﺒﺖ ﮨﯽ ﺗﻮ ﮨﮯ ﺟﻮ ﮨﻤﯿﮟ ﮔﻮﺩ ﻣﯿﮟ ﻟﮯ ﮐﺮﺟﮭﻮﻻ ﺟﮭﻮﻻﺗﯽ ہے، ﮔﺮﻣﯿﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﮨﻮﺍ ﮐﺎ ﺍﻧﺘﻈﺎﻡ ﮐﺮﺗﯽ ہے ، ﺳﺮﺩﯾﻮﮞﻣﯿﮟ ﺍﭘﻨﮯ آﻧﭽﻞ ﻣﯿﮟ ﭼﮭﭙﺎ ﻟﯿﺘﯽ ہے اورﮐﺒﮭﯽ ﺍﻧﮕﻠﯽ ﮐﮯ ﺍﺷﺎﺭﮮ ﺳﮯ ﭼﺎﻧﺪ ﺗﺎﺭﻭﮞ ﮐﯽ ﺳﯿﺮ ﮐﺮﺍﺗﯽ ہوئی ﺍﻟﻠﮧ ہو ﺍﻟﻠﮧ ہو ﮐﯽ ﻟﻮﺭﯾﺎﮞ ﺳﻨﺎﺗﯽ ہے ۔ ﮨﻤﺎﺭﯼ ﺍﯾﮏ ﻣﺴﮑﺮﺍﮨﭧ ﺳﮯ ﻣﺎﮞ ﮐﮯ ﭼﮩﺮﮮ ﭘﺮ ﺧﻮﺷﯿﺎﮞ ﺑﮑﮭﺮ ﺟﺎتی ہیں اور ہماری تھوڑی سی طبیعت کی ناسازی سے اس ﮐﺎ ﺩﻝ ﺗﮍﭖ ﺟﺎﺗﺎ ہے اوراس ﮐﺎ ﭼﮩﺮﮦ ﻏﻤﺰدﮦ ﮨﻮﺟﺎﺗﺎ ہے اور اس کی ﺭﺍﺗﻮﮞ ﮐﯽ ﻧﯿﻨﺪیں ﺣﺮﺍﻡ ﮨﻮﺟﺎﺗﯽ ہیں ۔ ﺳﺐ ﻟﻮﮒ اپنی اپنی ﻣﯿﭩﮭﯽ ﻧﯿﻨﺪ ﺳﻮرہے ہوتے ہیں اورﻣﺎﮞ ہمیں ﺍﭘﻨﯽ ﮔﻮﺩ ﻣﯿﮟ ﻟﯿﮑﺮ ﮨﻤﺎﺭﯼ ﺻﺤﺖ ﯾﺎﺑﯽ ﮐﯽ ﺩﻋﺎﺋﯿﮟ اس وقت تک ﻣﺎﻧگ رہی ہوتی ہے ﺟﺐ ﺗﮏ کہ ہم صحت یاب نہیں ہوتے ۔

یہ ﻣﺎﮞ ﮐﯽ ﻣﺤﺒﺖ ﮨﯽ ﺗﻮ ﮨﮯ ﺟﺐ ﮨﻢ ﺩﻭﺩﮪ ﮐﯽ ﺑﺎﺭ ﺑﺎﺭ ﺍﻟﭩﯽ ﮐﺮ ﮐﮯ اپنے ﮐﭙﮍوں ﮐﻮگندہ کرتے تو وہ ہم سے گندگی کوہٹا کر صاف کپڑے پہناتی اور جب ﮐﺒﮭﯽ ہم ﺭﺍﺗﻮﮞ ﮐو ﺑﺴﺘﺮ ﺧﺮﺍﺏ ﮐﺮﺩﯾﺘﮯ تو ﻭﮦ ﺻﺒﺢ ﮐﺎ ﺍﻧﺘﻈﺎﺭکئے بغیر ﺍﭘﻨﯽ ﻧﯿﻨﺪ ﮐﻮ ﻗﺮﺑﺎﻥ ﮐﺮ ﮐﮯ ﮨﻤﺎﺭﮮ ﻟﺌﮯ ﺩﻭﺳﺮﮮ ﮐﭙﮍﮮ ﺍﻭﺭ ﺳﻮﮐﮭﮯ ﺑﺴﺘﺮ ﮐﺎ ﺍﻧﺘﻈﺎﻡ ﮐﺮﺗﯽ تو ﮐﺒﮭﯽ ﮨﻤﺎﺭﮮ ﺧﺮﺍﺏ ﮐﺌﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﺑﮭﯿﮕﮯ ﺑﺴﺘﺮ ﭘﺮﺧﻮﺩ ﺳﻮ ﺟﺎﺗﯽ ﺍﻭﺭ ﮨﻤﯿﮟ ﺳﻮﮐﮭﮯ بسترپرﺳﻼﺗﯽ ﺗﮭﯽ ۔

یہ وہی ﭘﯿﺎﺭﯼ ﻣﺎﮞ ﮐﯽ ﻣﺤﺒﺖ ﮨﯽ ﺗﻮ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺟﺲ ﻧﮯ ﮨﻤﯿﮟ ﺑﻮﻟﻨﺎ ﺳﮑﮭﺎﯾﺎ ۔ اگر ہمیں بولنے میں دقت ہوتی تو وہ ﺳﯿﮑﮍﻭﮞ ﺑﺎﺭ ﺍنہی ﺍﻟﻔﺎﻅ ﮐودہراتی اور کہتی بول ﻣﯿﺮﮮ ﻻﻝ ﺍﻟﻠﮧ ﺍﻟﻠﮧ بول ۔ ﺟﺐ ﮨﻤﺎﺭﯼ ﺯﺑﺎﻥ ﺳﮯ ﺍﻟﻠﮧ ﺍﻟﻠﮧ ﻧﮑﻠﺘﺎ ﺗﻮاس ﮐﺎ ﺩﻝ ﻣﺴﺮﺗﻮﮞ ﺳﮯ ﺑﮭﺮ ﺟﺎﺗﺎ اورﭼﮩﺮﮦ ﺧﻮﺷﯽ ﺳﮯ ﮐﮭﻞ ﺍﭨﮭﺘﺎ ،یہ اسی ﭘﯿﺎﺭﯼ ﻣﺎﮞ ﮐﯽ ﻣﺤﺒﺖ ﮨﯽ ﺗﻮ ﮨﮯ ﺟو حصول تعلیم کی مدت میں ﮨﻤﯿﮟ ﺳﻠﯿﻘﮯ ﺳﮯ ﺗﯿﺎﺭ ﮐﺮ ﮐﮯ ﻣﮑﺘﺐ ﻣﯿﮟ ﺑﮭﯿﺠﺘﯽ ﺍﻭﺭ ﮨﻤﺎﺭﯼ ﺭﺍﮦ ﺩﯾﮑﮭﺘﯽ ﺟﻮ ﮐﭽﮫ ﺍﭼﮭﯽ ﮐﮭﺎﻧﮯ ﮐﯽ ﺷﺊ ﮨﻮﺗﯽ ﺍﺳﮯ ﭼﮭﭙﺎ ﮐﺮ ﺭﮐﮭﺘﯽ کہ جب ﻣﯿﺮﺍ ﻻﻝ ﺁﺋﮯ ﮔﺎ ﺗﻮ ﺍﺳﮯ ﺩﻭﮞ ﮔﯽ ﮐﮭﺎﻧﮯ ﮐﮯ ﻟﺌﮯ ﮨﻢ ﻣﮑﺘﺐ ﺳﮯ ﮔﮭﺮ ﭘﮩﻨﭽﺘﮯ ﺗﻮ ﻣﺎﮞ ﮨﻤﯿﮟ ﺩﯾﮑﮫ ﮐﺮ ﺧﻮﺵ ﮨﻮ ﺟﺎﺗﯽ ﺍﻭﺭ ﮨﺎﺗﮫ ﻣﻨﮧ ﺩﮬﻼﮐﺮ ﮐﮭﺎﻧﮯ ﮐﯽ ﺍﺷﯿﺎﺀ ﭘﯿﺶ ﮐﺮ ﺩﯾﺘﯽ ﺗﮭﯽ۔

ﭘﯿﺎﺭﯼ ﻣﺎﮞ ﮐﯽ ﺳﺐ ﺳﮯ ﻋﻈﯿﻢ ﺧﻮﺷﯽ ﮐﺎ ﺩﻥ ﻭﮦ ﮨﻮﺗﺎ ﮨﮯ ﺟﺐ ﮨﻢ ﺷﺎﺩﯼ ﮐﯽ ﻋﻤﺮ ﮐﻮ ﭘﮩﻨﭻ ﺟﺎﺗﮯ ﮨﯿﮟ ﻣﺎﮞ ﮐﮯ ﺩﻝ ﻣﯿﮟ ﺑﮍﮮ ﺍﺭﻣﺎﻥ ﮨﻮﺗﮯ ﮨﯿﮟ ﮐﮧ ﺍﺏ ﻣﯿﺮﮮ ﺑﯿﭩﮯ ﮐﯽ ﺷﺎﺩﯼ ﮨﻮﮔﯽ ﺍﺱ ﮐﮯ ﻟﺌﮯ ﻣﯿﮟ ﻧﯿﮏ ﺳﯿﺮﺕ ﺍﻭﺭ ﺣﺴﯿﻦ ﻭﺟﻤﯿﻞ ﻟﮍﮐﯽ تلاش کروں اور اپنے گھرکوجنت بناؤں ﮔﯽ ۔ انہی ارمانوں کے ساتھ وہ اپنے بیٹے کی شادی کرواتی ہے ، لیکن جب رخصتی کے بعد ماں کے سامنے ان ارمانوں کے برعکس ہونے لگتا ہے تو ماں اداس ہو جاتی ہے اور ﺍﯾﮏ ﻓﺮﻣﺎﮞ ﺑﺮﺩﺍﺭ ﺑﯿﭩﮯ ﮐﯽ ﻣﺤﺒﺖ ﺗﻘﺴﯿﻢ ﮨﻮﺟﺎﺗﯽ ﮨﮯ، ﭘﮩﻠﮯ ﺻﺮﻑ ﺟﻮ ﻣﺤﺒﺖ ﻣﺎﮞ ﺗﮏ ﻣﺤﺪﻭﺩ ﺗﮭﯽ ﺍﺏ وہ ﺑﯿﻮﯼ ﻣﯿﮟ ﻣﻨﻘﺴﻢ ﮨﻮﺟﺎﺗﯽ ﮨﮯ جس سے ﻓﻄﺮﯼ ﻃﻮﺭ ﭘﺮﮨﺮﻣﺎﮞ ﮐﮯ ﺩﻝ ﭘﺮ ﺿﺮﺏ ﻟﮕﺘﯽ ﮨﮯ ﻟﯿﮑﻦ ﻭﮦ ﺍﭘﻨﮯ ﺑﯿﭩﮯ ﮐﯽ ﺧﻮﺷﯽ ﮐﮯ ﻟﺌﮯ ﺍﺱ ﮐﮍﻭﮮ ﮔﮭﻮﻧﭧ ﮐﻮ ﺁﺏ ﺣﯿﺎﺕ ﺳﻤﺠﮫ ﮐﺮ ﭘﯽ ﺟﺎﺗﯽ ﮨﮯ ﮐﮧ ﻣﯿﺮﺍ ﺑﯿﭩﺎ ﺧﻮﺵ رﮨﮯ ﺍﺳﯽ ﻣﯿﮟ ﻣﯿﺮﯼ ﺑﮭﯽ ﺧﻮﺷﯽ ﮨﮯ،ﺍﮔﺮ ﺩﻟﮩﻦ خوش ﺍﺧﻼﻕ ﺧﺪﻣﺖ ﮔﺰﺍﺭﻭﻓﺎﺷﻌﺎﺭ ﻣﻞ ﺟﺎﺗﯽ ﮨﮯ ﺗﻮ ﮔﮭﺮ ﺟﻨﺖ ﮐﺎ ﻧﻤﻮﻧﮧ ﺑﻦ ﺟﺎﺗﺎ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﺳﺐ ﻣﻞ ﮐﺮ ﭘﺮﻟﻄﻒ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﮔﺰﺭ ﺑﺴﺮ ﮐﺮﺗﮯ ﮨﯿﮟ ۔ ﺍﺱ ﮐﮯ ﺑﺮﻋﮑﺲ ﮐﭽﮫ ﺍﯾﺴﯽ ﻣﺎﺋﯿﮟ ﮨﻮﺗﯽ ﮨﯿﮟ ﺟﻦ ﮐﻮ ﺩﻟﮩﻦ ﮐﮯ ﺭﻭﭖ ﻣﯿﮟ ﻧﺎﮔﻦ ﻣﻞ ﺟﺎﺗﯽ ﮨﮯ،ﮔﮭﺮ ﻣﯿﮟ ﺁﻧﮯ ﮐﮯ ﮐﭽﮫ ﮨﯽ ﺩﻧﻮﮞ ﺑﻌﺪ ﺩﻟﮩﻦ ﺍﭘﻨﮯ ﺯﮨﺮﯾﻠﮯ کردار ﮐﺎ ﻣﻈﺎﮨﺮﮦ ﮐﺮﺗﯽ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﭘﯿﺎﺭﯼ ﻣﺎﮞ ﮐﮯ ﺧﻼﻑ ﺑﯿﭩﮯ ﮐﮯ ﺩﻝ ﻣﯿﮟ ﻧﻔﺮﺕ ﺍﻧﮕﯿﺰ ﺑﺎﺗﯿﮟ ﺑﮭﺮﻧﺎ ﺷﺮﻭﻉ ﮐﺮ ﺩﯾﺘﯽ ﮨﮯ، ﺩﯾﮑﮭﻮ ﻧﺎ ﺟﯽ ﻣﺎﮞ ﻣﺠﮭﮯ ﺑﮩﺖ ﺗﻨﮓ ﮐﺮﺗﯽ ﮨﮯ ﻣﺠﮭﮯ ﺑﺮﺍ ﺑﮭﻼ ﮐﮩﺘﯽ ﮨﮯ ﻣﺠﮭﮯ ﺩﯾﮑﮫ ﮐﺮ ﺟﻠﺘﯽ ﮨﮯ ﺷﻮﮨﺮ ﺳﻨﺘﺎ ﺭﮨﺘﺎ ﮨﮯ ﻧﻈﺮ ﺍﻧﺪﺍﺯ ﮐﺮ ﺩﯾﺘﺎ ﮨﮯ ﺑﯿﻮﯼ ﮐﻮ ﺳﻤﺠﮭﺎﻧﮯ ﮐﯽ ﮐﻮﺷﺶ ﮐﺮﺗﺎ ﮨﮯ ۔ ﯾﮩﯽ ﻭﮦ ﻣﻘﺎﻡ ﮨﮯ ﺟﮩﺎﮞ ﭘﺮ ﺍﻧﺴﺎﻥ ﺑﺮﯼ ﻃﺮﺡ ﺳﮯ ﺍﻟﺠﮫ ﮐﺮ ﺭﮦ ﺟﺎﺗﺎ ﮨﮯ ﺍﮨﻠﯿﮧ ﮐﯽ ﭼﺎﻝ ﮐﻮ ﺳﻤﺠﮭﻨﮯ ﮐﯽ ﮐﻮﺷﺶ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﺮﺗﺎ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﻣﺎﮞ ﮐﮯ ﺧﻼﻑ ﺑﺎﺗﻮﮞ ﮐﻮ ﺍﭘﻨﮯ ﺩﻝ ﻣﯿﮟ ﺟﻤﻊ ﮐﺮ ﮐﮯ ﺭﮐﮭﺘﺎ ﮨﮯ، ﮨﻢ ﻟﻮﮔﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﮐﭽﮫ ﺍﯾﺴﮯ ﺑﮭﯽ ﻋﻘﻞ ﮐﮯ ﮐﻮﺭﮮ ﮨﻮﺗﮯ ﮨﯿﮟ ﺟﻮ ﺯﻥ کے ﻣﺮﯾﺪ ﮨﻮﺗﮯ ﮨﯿﮟ ﺍﻭر ﺻﺮﻑ ﺍﮨﻠﯿﮧ ہی ﮐﯽ ﺑﺎﺗﻮﮞ ﮐﻮ ﺍﮨﻤﯿﺖ ﺩﯾﺘﮯ ﮨﯿﮟ اورﻣﺎﮞ ﮐﯽ ﻣﺤﺒﺖ ﮐﻮ ﺑﺎﻻﺋﮯ ﻃﺎﻕ ﺭﮐﮫ ﺩﯾﺘﮯ ﮨﯿﮟ.ﺍﺳﯽ ﻟﺌﮯ ﺍﯾﮏ ﺩﻥ ﺍﯾﺴﺎ ﺑﮭﯽ ﺁﺗﺎ ﮨﮯ ﮐﮧ ﻣﺎﮞ ﮐﮯ ﺳﺎﻣﻨﮯ ﺍﻭﻧﭽﯽ ﺁﻭﺍﺯﻣﯿﮟ ﺯﻥ کا ﻣﺮﯾﺪ ﮐﮩﺘﺎ ﮨﮯ ﮐﮧ ﻣﺎﮞ تُو ﺗﻮ ﺍﺏ ﺑﻮﮌﮬﯽ ﮨﻮ ﮔﺌﯽ ﮨﮯ ﺗﺠﮭﮯ ﺳﻤﺠﮫ ﻣﯿﮟ ﻧﮩﯿﮟ ﺁﺗﺎ ﮨﮯ اور تو ﻣﯿﺮﯼ ﺍﮨﻠﯿﮧ ﺳﮯ ﺗﻮ ﺗﻮ ﻣﯿﮟ ﻣﯿﮟ ﮐﺮﺗﯽ ﺭﮨﺘﯽ ﮨﮯ ﻣﯿﮟ ﺍﭘﻨﯽ ﺍﮨﻠﯿﮧ ﮐﻮﺳﻤﺠﮭﺎ ﮐﺮ ﺗﮭﮏ ﮔﯿﺎ ﮨﻮﮞ، ﻟﯿﮑﻦ ﻭﮦ ﯾﮩﯽ ﮐﮩﺘﯽ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺗﻤﮩﺎﺭﯼ ﻣﺎﮞ ﮐﯽ ﻏﻠﻄﯽ ﮨﮯ ﻣﯿﮟ ﮐﺘﻨﺎ ﺑﺮﺩﺍﺷﺖ ﮐﺮﻭﮞ، ﺑﯿﭩﺎ ﻣﺎﮞ ﭘﺮ ﺩﻟﺨﺮﺍﺵ ﺍﻟﻔﺎﻅ ﮐﯽ ﺑﺎﺭﺵ ﮐﺮ ﺭﮨﺎ ﮨﮯ، ﺍﻭﺭ ﺍﮨﻠﯿﮧ ﻣﺤﺘﺮﻣﮧ ﺩﻝ ﻣﯿﮟ ﺧﻮﺵ ﮨﻮ ﺭﮨﯽ ﮨﮯ ﮐﮧ ﮐﺎﻡ ﺑﻦ ﮔﯿﺎ ﺁﺝ ﻣﺎﮞ ﮐﯽ ﺳﺮﺯﻧﺶ ﮐﯽ ﮔﺌﯽ ، ﺑﯿﭩﺎ ﮐﮩﺘﺎ ﮨﮯ ﻣﺎﮞ ﮨﻤﺎﺭﯼ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﺍﯾﮏ ﺳﺎﺗﮫ ﮔﺰﺭﺑﺴﺮﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮﺳﮑﺘﯽ ﮨﮯ ﻣﯿﺮﯼ ﺍﮨﻠﯿﮧ ﺍﻭﺭ ﻣﯿﮟ ﮐﮩﯿﮟ ﺍﻟﮓ ﻣﮑﺎﻥ ﮐﺎ ﺑﻨﺪﻭﺑﺴﺖ ﮐﺮﻟﯿﮟ ﮔﮯ ﺁﭖ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﻧﮩﯿﮟ ﺭﮨﯿﮟ ﮔﮯ ، ﺑﺘﺎﺅ ﺍﺱ ﻣﺎﮞ ﮐﮯ ﺩﻝ ﭘﺮ ﮐﯿﺴﺎ ﻏﻤﻮﮞ ﮐﺎ ﭘﮩﺎﮌ ﭨﻮﭨتا ﮨﻮﮔﺎ اور یہ سوچ کرﺩﻝ کیسے ﺩﮐﮭتا ﮨﻮﮔﺎ ﮐﮧ ﺟﺲ ﻓﺮﺯﻧﺪ ﮐﯽ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﺑﭽﭙﻦ ﺳﮯ ﭘﺮﻭﺭﺵ ﮐﯽ ﺁﺝ ﯾﮧ ﻣﺠﮭﮯ ﺑﻮﮌﮬﯽ ﮐﮩﺘﺎ ﮨﮯ ﻣﯿﺮﺍ ﺳﺎﺗﮫ ﭼﮭﻮﮌ ﮐﺮﺟﺎ ﺭﮨﺎ ﮨﮯ، زندگی کا یہ مرحلہﺍنسان کو ﺯﻧﺪﮔﯽ کے ﺍﯾﺴﮯ ﺩﻭﺭﺍﮨﮯ ﭘﺮ ﻻﮐﺮ ﮐﮭﮍا ﮐﺮ ﺩﯾﺘا ﮨﮯ کہ ﺟﮩﺎﮞ ﭘﺮ ﺍﻧﺴﺎﻥ ﮐﯽ ﻋﻘﻞ اورﺳﻮﭼﻨﮯ ﺳﻤﺠﮭﻨﮯ ﮐﺎ ﻣﺎﺩﮦ ﺑﺎﻗﯽ ﻧﮩﯿﮟ ﺭﮨﺘﺎ ﺍﻭﺭ ﭘﯿﺎﺭﯼ ﻣﺎﮞ ﮐﺎ ﮐﻠﯿﺠﮧ ﭘﮭﭧ ﺟﺎﺗﺎ ﮨﮯ، ﺍﯾﺴﮯ ﺣﺎﻻﺕ ﺍﮔﺮ ﭘﯿﺪﺍ ﮨﻮ ﺟﺎﺋﯿﮟ ﺗﻮ ﺑﮍﮮ ﺑﺰﺭﮔﻮﮞ ﺍﻭﺭ ﻋﻠﻤﺎﺀ ﮐﻮ ﮔﮭﺮ ﭘﺮ ﻣﺪﻋﻮ ﮐﺮﮐﮯ ﺍﺱ ﺑﺎﺕ ﮐﻮ ﺳﻠﺠﮭﺎﻧﺎ ﭼﺎﮨﯿﮯ ﺍﻟﻠﮧ ﮐﮯ ﺳﺎﻣﻨﮯ ﮔﺮﯾﮧ و ﺯﺍﺭﯼ ﮐﺮنی ﭼﺎﮨﯿﮯ اورﭘﯿﺎﺭﯼ ﻣﺎﮞ ﮐﺎ ﺩﻝ ﻧﮩﯿﮟ ﺩﮐﮭﺎﻧﺎ ﭼﺎﮨﺌﮯ اور ﯾﮧ ﺑﺎﺕ ﺑﮭﯽ ﺫﮨﻦ ﻧﺸﯿﻦ ﮐﺮ ﻟﯿﻨﺎ ﭼﺎﮨﯿﮯ ﮐﮧ ﺍﮨﻠﯿﮧ ﺍﻭﺭ ﺑﮭﯽ ﻣﻞ ﺳﮑﺘﯽ ﮨﮯ ﻟﯿﮑﻦ ﻣﺎﮞ ﻧﮩﯿﮟ ﻣﻞ ﺳﮑﺘﯽ ۔ﺍﺱ کا ﺳﺐ ﺳﮯ ﺑﮍا سبب ﻟﮍﮐﯿﻮﮞ ﮐﯽ ﺻﺤﯿﺢ ﺗﺮﺑﯿﺖ کا نہ ہونا ہے اور ﺍﻧﮩﯿﮟ ﺷﺎﺩﯼ ﺳﮯ ﭘﮩﻠﮯ اس بات کا احساس نہ دلانہ ہے ﮐﮧ ﺳﺎﺱ ﺑﮭﯽ ﺗﻤﮩﺎﺭﯼ ﻣﺎﮞ ہی کی طرح ﮨﮯ لہذا ﺍﺱ ﮐﮯ ﺩﻝ ﻣﯿﮟ ﺗﻤﮩﯿﮟ ﺑﯿﭩﯽ ﮐﯽ ﺟﮕﮧ ﺑﻨﺎﻧﯽ ﮨﮯ، ﺍﺱ ﮐﮯ ﺣﮑﻢ ﮐﻮ ﻣﺎﻧﻨﺎ ﮨﮯ ﺍﺱ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﻣﺤﺒﺖ ﮨﻤﺪﺭﺩﯼ ﺳﮯ ﭘﯿﺶ ﺁﻧﺎ ﮨﮯ ﻣﺎﮞ ﺳﻤﺠﮫ ﮐﺮﺍﺱ ﮐﯽ ﺧﺪﻣﺖ ﮐﺮنی ﮨﮯ ، ﺳﺮﭘﺮ ﺗﯿﻞ ﮐﯽ ﻣﺎﻟﺶ ﺍﻭﺭ ﮨﺎﺗﮫ ﭘﺎﺅﮞ ﺑﮭﯽ ﺩﺑﺎنےہیں ، ﺍﮔﺮ ﮐﺴﯽ ﺑﯿﭩﯽ ﻣﯿﮟ ﯾﮧ ﺧﻮﺑﯿﺎﮞ ﭘﯿﺪﺍ ﮨﻮ ﺟﺎﺋﯿﮟ ﺗﻮ ﻭﮦ ﺟﮩﺎﮞ ﺟﺎﺋﮯ ﮔﯽ ﻭﮦ ﮔﮭﺮ ﺟﻨﺖ ﮐﺎ ﻧﻤﻮﻧﮧ ﺑﻦ ﺟﺎﺋﮯ ﮔﺎ ﺍﺱ ﮐﯽ ﻭﺟﮧ ﺳﮯ ﮔﮭﺮ ﻣﯿﮟ ﺭﻭﻧﻖ ﺁﺟﺎﺋﮯ ﮔﯽ،ﺳﺎﺱ ﺑﮩﻮ ﮐﮯ ﺟﮭﮕﮍﮮ ﻣﯿﮟ ﺍﮐﺜﺮﻣﺎﺋﯿﮟ ﺑﮯ ﻗﺼﻮﺭﺍﻭﺭﺣﻖ ﭘﺮﮨﻮﺗﯽ ﮨﯿﮟ،ﺍﻥ ﮐﮯ ﺍﻓﮑﺎﺭ ﻭ ﺧﯿﺎﻻﺕ ﺑﮍﮮ ﺍﻋﻠﯽ ﮨﻮﺗﮯ ﮨﯿﮟ، ﻭﮦ ﺑﮩﻮ ﮐﻮ ﺍﭘﻨﯽ ﺑﯿﭩﯽ ﺳﻤﺠﮭﺘﯽ ہے ﺍﯾﺴﯽ ﻣﺎﺅﮞ ﮐﮯ ﮔﮭﺮ ﻣﯿﮟ ﭼﮩﺎﺭ ﺟﺎﻧﺐ ﺧﻮﺷﯿﺎﮞ ﺑﮭﺮﯼ ﺭﮨﺘﯽ ﮨﯿﮟ، ﺍﺱ ﮐﮯ ﺑﺮﻋﮑﺲ ﮐﭽﮫ ﺍﯾﺴﯽ ﻣﺎﺋﯿﮟ ﺑﮭﯽ ﮨﻮﺗﯽ ﮨﯿﮟ ﺟﻮ ﺑﮩﻮ ﮐﻮ ﺑﯿﭩﯽ ﮐﺎ ﺩﺭﺟﮧ ﻧﮩﯿﮟ ﺩﯾﻨﺎ ﭼﺎﮨﺘﯽ ﮨﯿﮟ ﺍﭘﻨﯽ ﺑﯿﭩﯿﻮﮞ ﮐﻮ ﺳﺮﮐﺎ ﺗﺎﺝ ﺳﻤﺠﮭﺘﯽ ﮨﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﺑﮩﻮ ﮐﻮ ﭘﯿﺮ ﮐﯽ ﺟﻮﺗﯽ ﺳﻤﺠﮭﺘﯽ ﮨﯿﮟ تو ان کا گھر جہنم بن جاتا ہے ۔ لہذا ضرورت اس بات کو سمجھنے کی ہے کہ ﺟﮩﺎﮞ ﭘﺮ ﺍﯾﮏ ﺑﮩﻮ ﮐﺎ ﯾﮧ ﻓﺮﺽ ﺑﻨﺘﺎ ﮨﮯ ﮐﮧ ﻭﮦ ﺳﺎﺱ ﮐﻮ ﺍﭘﻨﯽ ﻣﺎﮞ ﺳﻤﺠﮫ ﮐﺮﺍﺱ ﮐﯽ ﺧﺪﻣﺖ ﮐﺮﮮ ﻭﮨﯿﮟ ﭘﺮ ﻣﺎﮞ ﮐﺎ بھی یہ ﺣﻖ ﺑﻨﺘﺎ ﮨﮯ ﮐﮧ وہ ﺑﮩﻮﮐﻮ ﺍﭘﻨﯽ ﺑﯿﭩﯽ ﺳﻤﺠﮫ ﮐﺮﺍﺱ ﮐﯽ ﺩﻟﺠﻮﺋﯽ ﮐﺮﺗﯽ ﺭﮨﮯ ۔ انشاء اللہ ﺍﺱ ﻣﺜﺒﺖ ﺳﻮﭺ ﺳﮯ ﺳﺎﺱ ﺑﮩﻮ ﮐﺎ ﺟﮭﮕﮍﺍ ﺧﺘﻢ ﮨﻮ ﺟﺎﺋﮯ ﮔﺎ ۔

ﺍﻟﻠﮧ ﺭﺏ ﺍﻟﻌﺰﺕ ﮨﻢ ﺳبھوں ﮐﻮ ﺍﭘﻨﯽ ﻣﺎؤﮞ ﺳﮯ ﺯﻧﺪﮔﯽ بھرﺳﭽﯽ ﻣﺤﺒﺖ ﺍﻭﺭ ﺍﻥ ﭘﺮ ﺍﭘﻨﮯ ﺟﺎﻥ ﻭ ﻣﺎﻝ ﮐﻮ ﺻﺮﻑ ﮐﺮﻧﮯ ﮐﯽ ﺗﻮﻓﯿﻖ ﻋﻄﺎ ﻓﺮﻣﺎﺋﮯ اور ( وَلاَ تَقُلْ لَھُمَا اُفٍّ ) کا مصداق بنائے ۔ ﺁﻣﯿﻦ.

--Advertisement--

اظہارخیال کریں

Please enter your comment!
Please enter your name here