شہورؔ شیروری کی سب سے پہلی اردو نظم بعنوان ماں

0
890

یاد بے ساختہ اے ماں جو تری آتی ہے
دل تڑپ اٹھتا ہے آنکھوں میں نمی آتی ہے

اے خدا ماں پہ مری ہو تری جاری رحمت
کیا کہوں کتنی ہے اعلیٰ مری ماں کی عظمت

تیری شفقت تھی رضاعت کی مری عمر تلک
کتنی تکلیف سے پالا ہے یہ شاہد ہے فلک

یاد ہر پل تری آتی ہے مری پیاری ماں
دیدہِ تر لئے میں جاؤں تو اب جاؤں کہاں

تو نے ہر موڑ پہ کی میری سدا راہبری
زندگی میری بنائی ہے زمانہ میں کھری

اَشک یادوں کے نکل آتے ہیں جب آنکھوں سے
میں دعا کے لئے کہتا ہوں تری یادوں سے

درگذر کردے خطاؤں کو ، کہ نادان ہوں میں
ہوں خطا کار کہ نادان ہوں ، انسان ہوں میں

بخش دے اِس کو ، خطا کار ہے شہورؔ یا رب
تیری رحمت کا طلب گار ہے شہور یا رب

--Advertisement--

اظہارخیال کریں

Please enter your comment!
Please enter your name here